تَوَقُّفٌ

اردو اجتہادی مسائل میں مجتہد کا ترجیح سے توقف اختیار کرنا
Indonesia Berhenti

إِمْساكُ المُجْتَهِدِ عن التَّرْجِيْحِ في القَضايا الاجْتِهادِيَّةِ لِتَعارُضِ الأدِلَّةِ.

اردو دلائل میں تعارض کے سبب کسی مجتھد کا اجتہادی امور میں ترجیح سے رک جانا۔
Indonesia Tidak berkomentarnya seorang Mujtahid untuk melakukan tarjih dalam berbagai permasalahan ijtihadiyah karena adanya kontradiksi pada dalil-dalil yang ada.

التَّوَقُّفُ فِي أُصولِ الفِقْهِ: هو امْتِناعُ المُجْتَهِدِ عن اخْتِيارِ قَوْلٍ مِن الأَقْوالِ في المَسْأَلَةِ الاجْتِهادِيَّةِ؛ لِتَعارُضِ الأَدِلَّةِ عِنْدَهُ، أو عَجْزِهِ عن التَّرْجِيْحِ بَيْنَها، أو خَفاءِ تلك الأَدِلَّةِ، ونحو ذلك، والتَّوَقُّفُ مِن كَمالِ العِلْمِ والتَّوَرُّعِ.

اردو اصول فقہ کی اصطلاح میں ’توقف‘ سے مراد مجتہد کا کسی اجتہادی مسئلہ میں من جملہ اقوال مین سے کسی ایک قول کو اختیار کرنے سے رک جانا ہے۔ اس کی وجہ مسئلہ کے دلائل میں تعارض یا مجتہد کا کسی قول کو ترجیح دینے سے عاجز ہونا یا مجتہد کى ان دلائل تک رسائی نہ ہونا وغیرہ ہو سکتی ہے۔ ’توقف‘ علم، ورع اور تقوی کے کمال کی علامت ہے۔
Indonesia At-Tawaqquf dalam disiplin ilmu Usul Fikih adalah sikap ketidak berpihakan seorang Mujtahid pada berbagai pendapat dalam masalah Ijtihadiyyah; karena menurutnya terdapat kontrakdiksi pada dalil-dalil yang ada, dan ketidakmampuannya untuk mentarjih di dalamnya atau belum ditemukan dalil yang kuat, dan alasan lainnya. Tawaqquf ini menunjukkan kesempurnaan ilmu seseorang dan sikap Waraknya.

التَّوَقُّفُ: الاِمْتِناعُ والإمْساكُ عن الشَّيْءِ، وضِدُّه: الاسْتِمْرار والمُواصَلَةُ. وأَصْلُه: التَلَبُّثُ.

اردو کسی چیز سے باز آنے یا رکنے کو ’توقف ‘کہتے ہیں۔ اس کى ضد استمرار اور جاری رہنا ہے۔ اس لفظ کا اصل مفہوم ’ٹھہرنے‘ کا ہے۔
Indonesia At-Tawaqquf: Mencegah dan menahan terhadap sesuatu, lawan kata dari terus-menerus dan berkesinambungan. Asal kata at-Tawaqquf adalah diam.

يرِد مُصْطلَح (تَوَقُّف) في أصول الفقه، باب: العُموم والخُصوص، وباب: دَلالات الأَلْفاظِ. ويُطْلَقُ في الفِقْهِ أيضاً في كتاب القضاء، باب: الدَّعاوَى والبَيِّناتِ، ويُراد بِه: عَدَمُ الحُكْمِ في قَضِيَةٍ مُعَيَّنَةٍ لِتَعارُضِ الأَدِلَّةِ أو لِدَفْعِ مَفْسَدَةٍ. ويُطْلَق أيضاً في باب: نُكول الخَصْمِ، ويُراد به: الاِمْتِناع والإمْساك عن الشَّيْءِ.

التَّوَقُّفُ: الاِمْتِناعُ والإمْساكُ عن الشَّيْءِ، يُقال: تَوَقَّفَ عن المَشْيِ، أي: امْتَنَعَ وأَمْسَكَ عَنْهُ، وضِدُّه: الاسْتِمْرارُ والمُواصَلَةُ. وأَصْلُ التَّوَقُّفِ: التَلَبُّثُ، يُقال: تَوَقَّفْتُ على هذا الأَمْرِ، أَتَوَقَّفُ، تَوَقُّفاً، أيْ: تلَبَّثْتُ، ومِن مَعانِي التَّوَقُّفِ أيضاً: التَّثَبُّتُ والاِنْتِظارُ.

وقف

جمهرة اللغة : (2/968) - الصحاح : (4/1440) - المستصفى : (ص 364) - شرح مختصر الروضة : (3/587) - الحدود الأنيقة والتعريفات الدقيقة : (ص 75) -