إطراء

English Excessive praise
Français Flagornerie / Obséquiosité.
Español Adular.
اردو تعریف کرنے میں مبالغہ آرائی سے کام لینا۔
Indonesia Iṭrā`
Bosanski El-itra – pretjerana pohvala
Русский Чрезмерная хвала, восхваление

مجاوزة الحد في مدح البشر والكذب في ذلك.

English Excessive praise that includes lying.
Français Dépassement de la limite et mensonges dans les compliments faits [à une personne].
Español Es sobrepasar el límite en el elogio, y mentir en esa alabanza (2).
اردو انسان کی تعریف میں حد سے تجاوز کرنا اوراس میں دروغ گوئی سے کام لینا۔
Indonesia Tindakan melampaui batas dalam memuji manusia dan melakukan kebohongan di dalamnya.
Bosanski To je prelaženje granice u pohvali nekoga, popraćeno laganjem.
Русский Чрезмерное восхваление кого-либо, сопровождающееся ложью

الإطراء: هو الغلو والزيادة في الثناء على الشخص بأسماء وأوصاف لم يشهد لها الشرع، وقد تكون من الباطل، مثل: إطراء النصارى عيسى عليه السلام؛ لأنهم مدحوه بما ليس فيه، حيث قالوا: إنه ثالث ثلاثة، وإنه ابن الله - تعالى الله عما يقولون علوا كبيرا -. وسبب الإطراء إما التعظيم، أو المحبة للغير، ويدفع ذلك بأمرين: 1- إعطاء كل عبد حقه الذي أعطاه الله له، وإنزال البشر منازلهم، فلا يرفعون فوق منازلهم، ولا يجعل لهم شيء من خصائص الإلهية والربوبية. 2- المحبة الصحيحة من خلال اتباع الرسول صلى الله عليه وسلم وصحابته والتابعين لهم بإحسان، والسير على طريقتهم دون زيادة أو نقصان. وقد أرشد النبي صلى الله عليه وسلم إلى ذلك بقوله:"لاتطروني كما أطرت النصارى ابن مريم، إنما أنا عبد، فقولوا: عبد الله ورسوله".

English "Itrā" means going to extremes in praising someone by using names and descriptions that have no proof in the religious texts. It could be falsehood such as the excessive praise of Jesus, peace be upon him, by the Christians, who praised him for that which he does not have. They said that he is part of the divine trinity, and that he is Allah"s son, and other claims of disbelief and polytheism. True love lies only in following the Prophet, may Allah"s peace and blessings be upon him, and his Companions, and those who followed them, and adopting their methods without adding or neglecting anything.
Français La flagornerie est l’excès et le rajout dans les compliments d’une personne en la caractérisant par des noms et des attributs qui ne sont pas attestés par la Législation. Parfois, cela peut même être infondé comme les Chrétiens qui ont tellement flatté Jésus (sur lui la paix) en le complimentant par des choses qui ne lui seyaient pas. En effet, ils ont dit : « Il est le troisième des trois » ; « Il est le fils d’Allah » ; et d’autres choses qui y ressemblent et qui constituent du polythéisme et de la mécréance. En fait, le véritable amour consiste dans le suivi du Messager (sur lui la paix et le salut), de ses Compagnons, et de leurs Successeurs en toute vertu en empruntant leur voie sans rajout ni diminution.
Español Es el excesivo y exagerado elogio sobre una persona usando nombres y cualidades, que la Shari’ah no recoge. A veces incluso son falsos. Como la adulación que practican los cristianos sobre Isa, que la paz y las bendiciones sean con él, que lo alabaron en aquello que no tiene, y dijeron: Que Isa es parte de una trinidad (el Padre, el Hijo y el Espíritu Santo), y que es hijo de Al-lah, o que es el mismo Al-lah. El verdadero amor está en lo seguidores del Mensajero, que la paz y las bendiciones de Al-lah sean con él, y con sus compañeros, los que les siguieron de forma correcta y que continuaron su sendero sin exageración ni déficit.
اردو الإطراء: کسی شخص کی ایسے اسماء اور اوصاف کے ساتھ بڑھا چڑھا کر تعریف کرنا اور اس میں غلو سے کام لینا جن کی شریعت تائید نہیں کرتی ہے اور جو بسا اوقات باطل ہوتے ہیں۔ مثلا نصاری کی عیسی علیہ السلام کی حد سے زیادہ تعریف کرنا کیونکہ ان لوگوں نے عیسی علیہ السلام کی ان اوصاف کے ساتھ تعریف کی جو آپ میں موجود نہیں ہیں۔ انہوں نے کہا کہ: وہ (عیسی علیہ السلام) تین میں کا تیسرا ہیں، اور یہ کہ وہ اللہ کے بیٹے ہیں۔ یہ لوگ جو باتیں کہتے ہیں ان سے اللہ کی ذات بہت بالاتر ہے۔ اطراء (بے جا تعریف) کا سبب یا تو کسی کی تعظیم ہوتي ہے یا غیر کی محبت۔ اس سے دو طریقوں سے بچا جا سکتا ہے: 1۔ ہر بندے کو اس کا وہ حق دیا جائے جو اللہ نے اسے دیا ہے اور انسانوں کو ان کے صحیح مقام پر رکھا جائے، چنانچہ انہیں ان کے مقام سے بلند نہ کیا جائے اور نہ ہی الوہیت اور ربوبیت کے خصائص میں سے کسی خاصیت سے انہیں متصف کیا جائے۔ 2۔ صحیح محبت اپنا کر بایں طور کہ رسول اللہﷺ، آپ کے صحابہ اور تابعین کی اتباع کی جائے اور بنا کسی کمی و اضافہ کے ان کے راستے پر چلاجائے۔ اضافہ سے مراد یہ ہے کہ آدمی بغیر کسی دلیل کے عبادت کے امور میں کچھ اضافہ کردے مثلاً ایسی نمازوں اور عیدوں کا ایجاد کر نا جن کی از روئے شریعت کوئی اصل نہ ہو۔ کمی کرنے سے مراد یہ ہے کہ طاقت رکھنے کے باوجود جان بوجھ کر واجبات یا سنن کو ترک کر دیاجائے اور ان کی ادائیگی میں تفریط سے کام لیا جائےجیسے جماعت، حکمران کی اطاعت اور نماز کی سنتوں وغیرہ کو چھوڑ دینا۔
Indonesia Al-Iṭṭirā` ialah guluw dan berlebihan dalam memuji seseorang dengan nama dan sifat-sifat yang tidak ditunjukkan oleh syariat, dan terkadang juga merupakan kebatilan. Contohnya pujian berlebihan orang-orang Nasrani kepada Isa 'alaihissalām, karena mereka menyanjungnya dengan sesuatu yang tidak dia miliki. Mereka mengatakan, dia satu dari tiga (trinitas) dan bahwa dia putra Allah. Mahatinggi Allah dari apa yang mereka katakan. Pujian yang berlebihan bisa disebabkan karena pengagungan, juga bisa kecintaan. Dan hal itu bisa dicegah dengan dua hal: 1. Memberikan kepada setiap hamba haknya sesuai dengan yang diberikan oleh Allah kepadanya dan menempatkan manusia di posisi mereka. Maka, mereka tidak boleh diangkat di atas kedudukannya dan tidak diberikan sebagian dari keistimewaan ulūhiyyah dan rubūbiyyah. 2. Cinta yang benar, dengan cara mengikuti Rasul ṣallallāhu ‘alaihi wa sallam, para sahabatnya, dan orang-orang yang mengikuti mereka dengan kebaikan, serta menempuh jalan mereka tanpa ada penambahan atau pengurangan. Nabi -ṣallallāhu 'alaihi wa sallam- telah memberikan bimbingan terkait hal itu dengan sabda beliau, "Janganlah kalian berlebihan terhadap diriku sebagaimana yang dilakukan oleh orang-orang Nasrani kepada Isa bin Maryam. Sesungguhnya aku adalah seorang hamba, maka katakanlah Abdullah (hamba Allah) dan Rasul-Nya.
Bosanski Pretjerana pohvala je vid preuveličavanja u pohvali neke osobe, tako da se koriste imena i opisi koji nemaju utemeljenje u šerijatu. Nekada pretjerana pohvala vodi ka neistini, a kao primjer možemo navesti pohvalu koju su kršćani upućivali Isau, pohvalivši ga onim što nije pri njemu, pa su kazali: “On je jedan od trojice, sin Allahov” i sl. Do pretjeranog hvaljenja dovodi veličanje ili pretjerana ljubav prema nekom. Pretjerano hvaljenje može se spriječiti na dva načina. Prvi način jeste da se svakom čovjeku daju prava i status koji mu je Gospodar dao, te da se niko ne stavlja na položaj koji mu ne pripada i da se nikom ne pripišu Božija svojstva, niti sudjelovanje u upravljanju svemirom i svime što postoji. Drugi način jeste da se svakome pokloni ispravna ljubav, a to se može ostvariti pomoću slijeđenja Poslanika, sallallahu alejhi ve sellem, njegovih ashaba i tabiina, koračanja njihovim putem, bez bilo kakvog dodavanja i bez oduzimanja. Riječi: “bez bilo kakvog dodavanja”, odnose se na uvođenje u vjeru ibadeta za koji ne postoji uporište u šerijatskim dokazima, kao naprimjer da obveznik utemeljenim smatra neki namaz koji ne postoji ili da obilježava praznik koji šerijatom nije ustanovljen. A riječi: “bez oduzimanja”, znače da se obveznik nemarno odnosi i namjerno izostavlja vjerske obaveze ili sunnete, a u mogućnosti je da ih izvrši, kao naprimjer izostavljanje skupnog namaza – namaza u džematu, nepokoravanje pretpostavljenima, izostavljanje namaskih sunneta i tako dalje.
Русский الْإطْرَاء - чрезмерность и излишество в восхвалении какого-либо человека, когда его называют именами и качествами, не подтверждаемыми в шариате, и иногда такое восхваление может быть лживым. Например, как восхваление христианами Исы, мир ему, так как они восхваляли его, приписывая ему качества, которых у него нет, говоря что он "третий из трёх", что он "сын Аллаха", а также другие встречающиеся у них проявления многобожия и неверия. Истинная и правильная любовь заключается в следовании Посланнику Аллаха, да благословит его Аллах и приветствует, его сподвижникам и тем, кто последовал им во благе, следование по их пути без добавления или убавления чего-либо.

المبالغة ومجاوزة الحد في المدح، يقال: أطرى فلان فلانا، يطريه، إطراء: إذا بالغ في مدحه. وأصله من الطراوة، وهي: الليونة والجدة، ومنه سمي الغلو في المدح إطراء؛ لأن المادح يجدد ذكر أوصاف الممدوح.

English "Itrā"": exaggerating and exceeding the limits in praise, excessive commendation.
Français L’exagération et le dépassement de la limite dans les compliments et les éloges.
Español La exageración y sobrepasar el límite en el elogio. Es la excesiva alabanza.
اردو الإطراء: تعریف کرنے میں مبالغہ کرنا اور حد سے تجاوز کرنا۔ جب کوئی شخص کسی کی تعریف میں مبالغہ کرے تو کہا جاتا ہے: أَطْرَى فُلانٌ فُلاناً، يُطْرِيه، إِطْراءً کہ فلاں نے فلاں کی تعریف میں مبالغہ سے کام لیا۔ یہ لفظ دراصل ”الطَرَاوَة“ سے ماخوذ ہے جس کا معنی ہے:نرم ہونا اور تازہ ہونا۔ مدح و ستائش میں غلو برتنے کو اطراء کا نام اسی معنی کے اعتبار سے دیا جاتا ہے، کیونکہ تعریف کرنے والا شخص ممدوح کے اوصاف کی یاد تازہ کرتا ہے۔
Indonesia Berlebihan dan melewati batas dalam memuji. Dikatakan, "Aṭrā fulānun fulānan yuṭrīhi iṭrā`an" apabila dia berlebihan dalam memujinya. Al-Iṭrā` berasal dari kata "aṭ-ṭarāwah", artinya lembut dan sungguh-sungguh. Dari makna itulah perbuatan berlebihhan dalam pujian dinamakan iṭrā` karena orang yang memuji senantiasa memperbaharui penyebutan sifat-sifat orang yang dipuji.
Bosanski El-itra znači pretjerivanje i prelaženje granice u pohvali nekoga. Kaže se: “atra fulanun fulanen, jutrihi, itraen”, što znači: “pretjerano je hvalio tog i tog”. Osnova je od riječi et-taraveh, što znači mehkoća i novost (obnavljanje). Pretjerivanje u pohvali nazvano je itraun jer onaj ko hvali stalno iznova spominje vrline hvaljenog.
Русский Чрезмерное и излишнее восхваление, также الْإطْرَاء означает "очень много восхвалять кого-либо".

يطلق مصطلح (إطراء) في العقيدة في باب: توحيد الأسماء والصفات، وباب: الإيمان بالرسل، وباب: الفرق والمذاهب عند الكلام على فرقة الصوفية ونحوها، وغير ذلك من الأبواب.

المبالغة ومجاوزة الحد في المدح، يقال: أطرى فلان فلانا، يطريه، إطراء، فهو مطر: إذا بالغ في مدحه. والإطراء أيضا: الزيادة في الثناء. وأصله من الطراوة، وهي: الغضاضة والليونة والجدة، والطري: الشيء اللين الجديد، ومنه سمي الغلو في المدح إطراء؛ لأن المادح يجدد ذكر أوصاف الممدوح، وقيل: لأن الإطراء سبب للضعف والاغترار. ومن معانيه أيضا: الإغراء، والخلط.

طرو

مقاييس اللغة : (3/454) - التوقيف على مهمات التعاريف : (ص 54) - الفروق اللغوية : (ص 51) - لسان العرب : (15/6) - تاج العروس : (38/488) - المصباح المنير في غريب الشرح الكبير : (2/372) - معجم لغة الفقهاء : (ص 73) -