اسْتِرْجاعٌ

English Calamity supplication
اردو إِنَّا لِلَّهِ وَإِنَّا إِلَيْهِ رَاجِعونَ پڑھنا
Indonesia Ucapan innā lillāhi wa innā ilaihi rāji'ūn

قَوْلُ الشَّخْصِ عند الـمُصِيبَةِ: إنَّا لِلَّهِ وإنَّا إِلَيْهِ راجِعون.

English Saying at the time of calamity: "Inna lillah wa inna ilayhi raaji‘oon." (Indeed we belong to Allah, and indeed unto Him we shall return.)
اردو کسی شخص کا مصیبت کے وقت ”إِنَّا لِلَّهِ وَإِنَّا إِلَيْهِ رَاجِعونَ“ کہنا۔
Indonesia Ucapan seseorang saat tertimpa musibah, "innā lillāhi wa innā ilaihi rāji'ūn".

الاِسْتِرْجاعُ: مِن السُّنَنِ التي يقولُها الإنسانُ إذا نَزَلَت به مُصيبَةٌ مِن المَصائِبِ، كَبيرَةً كانت أو صَغِيرَةً، وَمعنى قَوْلِ المَرْءِ "إنّا لِلَّهِ"، أي: أُقِرُّ وأَعْتَرِفُ أنَّنا نحن وأَهْلُنا وأَمْوالُنا عَبيدٌ لِلَّهِ، ومُلْكٌ له يَفْعَلُ فِينا ما يَشاءُ. ومعنى قَوْلِ: "وإنّا إِلَيْهِ راجِعونَ"، أي: أُقِرُّ وأَعْتَرِفُ أنَّنا إلى اللهِ عائِدونَ مَبْعوثونَ بِالـمَوْتِ أوّلاً، ثمّ بِالبَعْثِ مِن القُبورِ، وهذا يُورِثُ في نَفْسِ الشَّخْصِ تَفْويضَ الأَمْرِ إلى اللهِ تعالى، والتَّوكُّلَ عليه، والصَّبْرَ على البلاءِ.

English "Istirjaa‘" (saying: "Indeed we belong to Allah, and indeed unto Him we shall return.") is an act of the Sunnah which a Muslim should observe when afflicted by a calamity or disaster, whether it is big or small. The meaning of the statement "Indeed we belong to Allah" is: I admit and affirm that our selves, our family, and our wealth are slaves to Allah, and that Allah owns us and does whatever He wills with us. The meaning of the statement "and indeed unto Him we shall return" is: I admit and affirm that we shall return to Allah first through death and then through resurrection from the graves. This inspires the person to entrust his affairs to Allah, rely upon him, and stay patient at the time of affliction.
اردو جب انسان کسی مصیبت میں مبتلا ہوجائے تو ’کلماتِ استرجاع‘ کا پڑھنا سنت ہے، چاہے وہ مصیبت بڑی ہو یا چھوٹی ہو۔ ’’انّا للہ‘‘ کہنے کا مطلب ہے کہ میں اس چیز کا اقرار واعتراف کرتا ہوں کہ ہم، ہمارے اہل وعیال سب اللہ تعالی کے بندے ہیں، ہمارا مال اور سب کچھ اللہ تعالی کی ملکیت ہے، وہ جس طرح چاہے ان میں تصرف کرسکتا ہے۔ اور ’وَاِنّا اِلیہِ راجعون‘ کہنے کا مطلب یہ ہے کہ میں اس چیز کا اعتراف کرتا ہوں کہ ہم سب اللہ تعالی کی طرف لوٹ کر جانے والے ہیں، پہلے ہمیں موت آئے گی، پھر قبروں سے دوبارہ زندہ کرکے اٹھائے جائیں گے۔ اس سے انسان کے اندر کسی کام کواللہ تعالی کے سپرد کرنے، اس کی ذات پر توکل کرنے اور مصائب پر صبر کرنے کی صلاحیت پیدا ہوتی ہے۔
Indonesia Al-Istirjā' termasuk sunah yang diucapkan seseorang apabila tertimpa suatu musibah, besar atau kecil. Maksud ucapan "innā lillāhi" adalah aku menyatakan dan mengakui bahwa kami, keluarga kami dan harta benda kami adalah hamba sekaligus milik Allah, Dia berhak melakukan apa pun terhadap kami sekehendak-Nya. Dan maksud ucapan " wa innā ilaihi rāji'ūn" adalah aku menyatakan dan mengakui bahwa hanya kepada Allah kami kembali dan dibangkitkan, pertama dengan kematian dan kemudian dibangkitkan dari kubur. Pernyataan ini menumbuhkan di dalam jiwa seseorang akan penyerahan perkara pada Allah -Ta'ālā-, berserah diri pada-Nya dan sabar menghadapi ujian.

الاسْتِرْجاعُ: الاِسْتِعادَة والاسْتِرْداد، ومِن مَعانِيه: قَوْلُ إِنَّا لِلَّهِ وإنّا إِلَيْهِ راجِعونَ.

English "Istirjaa‘": restoring, recovering, and reclaiming (something). It also refers to saying: "Inna lillah wa inna ilayhi raaji‘oon." (Indeed we belong to Allah, and indeed unto Him we shall return.)
اردو الاسْتِرْجاعُ: واپس لینا‘، ’واپسی قبضہ کا دعویٰ کرنا‘اور ’کسی چیز کی واپسی کا مطالبہ کرنا‘۔ کہاجاتا ہے ’اِسْتَرْجَعَ حَقَّہُ‘ کہ اس نے اُس سے اپنا حق واپس لے لیا اور دوسرے نے اسے لوٹادیا۔ لفظِ ’استرجاع‘، ’إِنَّا لِلَّهِ وَإِنَّا إِلَيْهِ رَاجِعونَ‘ کہنے کے معنی میں بھی استعمال ہوتا ہے۔
Indonesia Al-Istirjā' artinya meminta kembali. Dikatakan, "Istarja'a ḥaqqahu" artinya ia meminta kembali haknya. Di antara makna al-Istirjā' yang lain adalah ucapan "innā lillāhi wa innā ilaihi rāji'ūn".

يرِدُ مُصْطلَح (اسْتِرجاع) في كتاب الصَّلاةِ، باب: الجَنائِزِ، وباب: الصَّلاة على الـمَيِّتِ. ويُطْلَقُ في كتاب البُيوعِ، باب: خِيار العَيْبِ، وغَيْرِهِ من الأبواب، ويُراد به: اسْتِعادَةُ الـمالِ أو الـحَقِّ مِن غَيْرِه.

الاسْتِرْجاعُ: طَلَبُ الإِرْجاعِ وَالرَّدِّ، ويأتي بمعنى: الاِسْتِعادَة والاسْتِرْداد، يُقال: اسْتَرْجَعَ حَقَّهُ، أيْ: اسْتَعادَهُ ورَدَّهُ إِلَيْهِ. ومِن مَعانِيه: قَوْلُ إِنَّا لِلَّهِ وإنّا إِلَيْهِ راجِعونَ، يُقال: اسْتَرْجَعَ الرَّجُل عند المُصِيبَةِ: إذا قال: إنّا لِلَّهِ وإنّا إِلَيْهِ راجِعُونَ.

رجع

العين : (1/226) - معجم مقاييس اللغة : (2/490) - مغني الـمحتاج فـي شرح الـمنهاج : (2/56) - كشاف القناع عن متن الإقناع : (3/227) - معجم لغة الفقهاء : (ص 60) - تهذيب اللغة : (1/237) - المحكم والمحيط الأعظم : (1/317) - تاج العروس : (21/76) - القاموس الفقهي : (ص 144) - معجم لغة الفقهاء : (ص 60) - الموسوعة الفقهية الكويتية : (3/281) -