تَنْزِيهٌ

English Exaltation
Español Al-tanzih (absolución, condonación, exculpación).
اردو تنزیہ (ہر عیب و نقص سے پاک قرار دینا)
Indonesia Penyucian
Bosanski Tenzih: predstavljanje Gospodara Uzvišenog kao slobodnog od svake manjkavosti
Русский Танзих - Отрицание наличия у Аллаха каких-либо недостатков, а также отрицание чего-либо, подобного Ему.

تبرئَةُ اللهِ تعالى وتَبْعِيدُه عن كُلِّ عَيبٍ ونَقصٍ، ونَفْيُ مُماثَلَةِ غيرِهِ لَهُ في صِفاتِ الكَمالِ والجَمالِ.

English Exalting Allah the Almighty above all deficiencies and freeing Him from all imperfections, while confirming that none resembles Him in the attributes of perfection.
Español Es la absolución y la exclusión de cualquier tipo de deficiencia o imperfección relativa a Al-lah, y la negación de la existencia de la semejanza a Al-lah en cuanto a los atributos de al-kamal (es decir, la absoluta/completa trascendencia de Al-lah).
اردو اللہ تعالی کو ہر قسم کے عیب و نقص سے پاک اور بری قرار دینا اور اس کے صفات کمال وجمال میں اس کے ساتھ کسی اور کی مماثلت کی نفی کرنا۔
Indonesia Membebaskan Allah -Ta'ālā- dan menjauhkan-Nya dari segala aib dan kekurangan, serta meniadakan keserupaan makhluk dengan-Nya dalam sifat-sifat kesempurnaan dan keindahan.
Bosanski Smatranje da je Allah čist od svake mahane i negiranje bilo kakve sličnosti sa drugima u svojstvima savršenstva i ljepote.
Русский Отрицание наличия у Всевышнего Аллаха каких-либо недостатков и изъянов, а также отрицание подобия кого-либо Аллаху в Его атрибутах совершенства и красоты.

إنَّ حَقِيقَة التَّنزِيهِ: أن يَنفِي العَبدُ عن اللهِ تعالى ما لا يَلِيقُ بالله شرعاً، وعَقلاً، كالوَلَدِ والوالِد والشَّريكِ، والنِّدِّ والشَّبِيهِ، وأَن يُنزِّهَه عن النَّقائِص المُنافِية للكمالِ، فيُنزِّهَه عن المَوتِ والنَّومِ والعَجْز، والحاجة وغير ذلك ممّا نَزَّه عنه نَفسَه في كِتابِه أو على لِسانِ رسولِه عليه الصَّلاة والسَّلام مع إثباتِ ما يُضادُّها مِن صِفاتِ الكمال؛ لكمالِهِ سُبحانَه في ذاتِه وأسمائِهِ وصِفاتِه وأفْعالِهِ، ولِغِناه المُطلَق عن كلِّ ما سِواه. ثم إنَّ التَّنزِيهَ الذي يَستَحِقُّه الرَّبُّ - سُبحانه وتعالى - يجمَعه نَوعانِ: أحدُهما: نَفْيُ النَّقْصِ والعَيب عنه، وذلك مِن لَوازِم إثباتِ صِفاتِ الكمالِ. والثّاني: نَفْيُ مُماثَلَةِ شَيْءٍ مِن الأشياء فيما يَستحِقُّه تعالى مِن صِفات الكمال الثّابتَةِ له. وأمّا مَفهوم التَّنزِيهِ عند المُعطِّلَة فهو بِزعمهم: نَفْيُ صِفاتِ الكمالِ عنه - سُبحانه وتعالى -، وتَعطِيلُ البارئ عمّا وَصَفَ به نَفسَه، أو وَصَفَه به رَسولُه صلى الله عليه وآله وسلم كصِفة السَّمع، والبَصَر، والعِلم، والعُلُو، والمَجيء لِفصلِ القَضاء يوم القِيامة، ونحو ذلك، وفي رأيِهِم أنَّ كلَّ مَن يُثبِتُ تلك الصِّفاتِ فهو مُجَسِّمٌ مُشبِّهٌ مُمَثِّل، وأوَّل مَن أدخَل النَّفيَ في التَّنزِيه هم الجَهميَّة، وتابَعَهم بعد ذلك المُعتزِلَة.

English "Tanzeeh" in reality implies that one frees Allah the Almighty from anything that does not befit Him according to the Shariah and reason, such as having a son, father, partner, rival, or equal. It also requires one to deem Him far above all defects that contradict perfection, such as death, sleep, impotence, need, and other things that Allah denied Himself in His Book or through His Messenger, may Allah"s peace and blessings be upon him. To achieve this, it is imperative to affirm the attributes of perfection to Allah the Almighty. This is because Allah is absolutely perfect in His essence, names, attributes, and actions, and stands in no need of anything. Furthermore, "tanzeeh" that the Lord, may He be Glorified and Exalted, deserves is summarized into two types: 1. Negation of imperfection and defects from Him, which is a prerequisite for the affirmation of the attributes of perfection. 2. Negation of the resemblance of anything to Him in the attributes of perfection that are affirmed for Him. As for the concept of "tanzeeh" according to the "Mu‘attilah", they negate the attributes of perfection from Allah, may He be Glorified and Exalted, and deny what Allah has described Himself with, or what His Messenger, may Allah"s peace and blessings be upon him, described Him with such as the attributes of hearing, seeing, knowledge, elevation, coming to judge people"s affairs on the Day of Judgment, etc. According to them, anyone who affirms such attributes is comparing and likening Allah the Almighty to His creatures. The first ones to introduce this deviant concept in "tanzeeh" were the "Jahmiyyah" who were later followed by the "Mu‘tazilah".
Español Al-tanzih se realiza mediante la negación del siervo de aquello que es impropio a Al-lah El Altísimo, racionalmente o legalmente, como por ejemplo, que Al-lah pueda engendrar o que haya sido engendrado, o que tenga copartícipes, o que tenga contraparte o semejanza con algo o alguien. También que Al-lah tenga las deficiencias opuestas a al-kamal (es decir, la absoluta/completa trascendencia de Al-lah). Por tanto, Al-lah está exento de la muerte, el sueño, la impotencia, la necesidad, que los podemos hallar negados por Al-lah en el Noble Corán o a través de la transmisión de Su Mensajero Muhammad (la paz y las bendiciones de Al-lah sean con él), junto con la afirmación de los atributos opuestos de perfección al-kamal (plenitud, integridad, trascendencia). Al-kamal corresponde solo a Al-lah El Glorificado en Su Esencia, Sus nombres, Sus atributos y Sus acciones/obras, y se evitan de forma absoluta aquellos elementos que son impropios a Al-lah. Al-tanzih que merece Al-lah El Glorificado, El Altísimo, tiene dos elementos: primero es la negación de la deficiencia o imperfección a Al-lah; se debe sostener Su atributo de al-kamal. La segunda es la negación de la similitud de algo en aquello que es impropio a Al-lah El Altísimo, como la negación del atributo de al-kamal que es propio de Al-lah. El concepto de al-tanzih para los al-mu’attila implica negar al-kamal de Al-lah de aquello que Él ha descrito a Sí Mismo y que haya sido transmitido por Su Mensajero Muhammad (la paz y las bendiciones de Al-lah sean con él), como los atributos de al-sam' (el oído/la audición), al-basar (la vista/visión), al-'ilm (el conocimiento), al-‘ulwa (elevación al Trono) y la llegada del Día del Juicio Final, etc… En la opinión de los seguidores de la al-mu’attila, toda aquella persona que cree en estos atributos será una persona que da figura, semejanza y similitud a Al-lah. Los primeros que rechazaron a los al-mu’attila son los al-jahmía, seguido por los al-mu’tazila.
اردو ’تَنْزِیْہ‘ کی حقیقت یہ ہے کہ بندہ اللہ تعالی سے ان چیزوں کی نفی کرے جو شرعی اور عقلی طور پر اللہ کے شایانِ شان نہیں ہیں، جیسے (اللہ کا) بیٹا ہونا، (اس کا) باپ ہونا، شریک و ہمسر اور مثیل ہونا۔ ’تنزیه‘ کی حقیقت میں یہ بھی شامل ہے کہ بندہ اللہ کو ان تمام نقائص سے پاک ٹھہرائے جو کمال کے منافی ہیں۔ چنانچہ وہ اللہ کو موت، نیند اور عاجزی و ضرورت مندی غرض ہر اس شے سے بری قرار دے جس سے اللہ تعالی نے اپنی کتاب میں یا اپنے رسول کی زبان سے اپنے آپ کو بری قرار دیا ہے اور اس کے ساتھ ساتھ ان کے بالمقابل صفاتِ کمال کو بھی اللہ کے لیے ثابت کرے کیونکہ اللہ تعالی اپنی ذات، اپنے اسماء و صفات اور اپنے افعال میں کمال سے متصف ہے اور اس لیے کہ وہ اپنے علاوہ ہر کسی سے بالکل بے نیاز ہے۔ اللہ تعالی جس تنزیہ کا مستحق ہے اس کی دو قسمیں ہیں: پہلی قسم: اللہ تعالی سے نقص و عیب کی نفی کرنا، اور یہ صفاتِ کمال کے اثبات کے لوازمات میں سے ہے۔ دوسری قسم: اللہ تعالی اپنے لیے ثابت شدہ جن صفاتِ کمال کا مستحق ہے ان میں کسی بھی چیز کی مماثلت کی نفی کرنا۔ ’معطلہ‘ کے نزدیک ’تنزیه‘ کا جو مفہوم ہے وہ ان کے گمان کے مطابق اللہ تعالی سے صفاتِ کمال کی نفی کرنا اور باری تعالی کو ان صفات سے عاری قرار دینا ہے جن سے اللہ نے اپنے آپ کو یا اس کے رسول ﷺ نے اسے موصوف کیا ہے، جیسے سمع، بصر، علم، علو اور روزِ قیامت فیصلے کے لیے آنا وغیرہ جیسی صفات۔ ان کے خیال میں جو شخص بھی ان صفات کا اثبات کرتا ہے وہ تجسیم و تشبیہہ اور تمثیل کرنے والا ہے۔ ’تنزيه‘ میں نفی کو جس گروہ نے سب سے پہلے داخل کیا وہ ’جہمیہ‘ ہیں۔ بعد ازاں معتزلہ ان کے نقش قدم پر چلے۔
Indonesia Hakekat at-tanzīh adalah seorang hamba meniadakan dari Allah -Ta'ālā- sesuatu yang tidak layak bagi-Nya secara syariat dan akal, seperti anak, bapak, sekutu, tandingan dan yang serupa, dan menyucikan-Nya dari segala kekurangan yang menafikan sifat kesempurnaan. Maka ia membebaskan-Nya dari kematian, aktifitas tidur, kelemahan, kebutuhan dan lain sebagainya yang telah Dia nafikan dari diri-Nya dalam Kitab-Nya atau melalui lisan Rasul-Nya -ṣallallāhu 'alaihi wa sallam- disertai penetapan hal yang berlawanan dengannya berupa sifat kesempurnaan; karena kesempurnaan Allah -Subḥānahu wa Ta'ālā- dalam zat, nama-nama, sifat-sifat dan perbuatan-perbuatan-Nya, serta ketidakbutuhan-Nya secara mutlak kepada segala sesuatu selain diri-Nya. Selanjutnya, penyucian yang pantas disandang Allah -Subḥānahu wa Ta'ālā- terhimpun dalam dua macam: 1. Menafikan kekurangan dan aib dari-Nya, dan ini termasuk konsekuensi dari penetapan sifat-sifat kesempurnaan. 2. Menafikan penyerupaan sesuatu terhadap sifat-sifat kesempurnaan Allah yang Dia sandang. Adapun maksud at-tanzīh menurut sekte al-Mu'aṭṭilah adalah meniadakan sifat-sifat kesempurnaan dari Allah -Subḥānahu wa Ta'ālā-, dan mengosongkan Allah dari apa yang Dia sifatkan pada diri-Nya atau disifatkan oleh Rasulullah -ṣallallāhu 'alaihi wa sallam-, seperti sifat mendengar, melihat, mengetahui, berada di atas (tinggi), datang untuk menetapkan keputusan pada hari kiamat, dan sifat-sifat lainnya. Menurut pendapat mereka bahwa setiap orang yang menetapkan sifat-sifat itu maka dia itu Mujassim (menganggap Allah berfisik), Musyabbih (menyerupakan Allah dengan makhluk), dan Mumaṡṡil (menyamakan Allah dengan makhluk). Sekte pertama yang memasukkan penafian (sifat Allah) dalam pengertian at-tanzīh adalah sekte Jahmiyyah, dan selanjutnya mereka diikuti oleh sekte Muktazilah.
Bosanski Suština "tenziha" je da rob negira Allahu sve ono što Mu po shvatanjima vjere i razuma ne priliči, kao što su dijete, otac, sudrug, suparnik ili to da postoji neko sličan Njemu, te da se negiraju sve mahane koje su u koliziji sa savršenstvom, kao što su smrt, san, nemoć, potreba i sve ono što je negirao glede Sebe ili što je negirao Njegov Poslanik, sallallahu alejhi ve sellem, uz potvrđivanje savršenstva koje je suprotno toj negiranoj manjkavosti. Naime, Allah je savršen u Biću, imenima, svojstvima i djelima, i On je apsolutno neovisan od svega što postoji. Zatim, "tenzih" kojeg zaslužuje Gospodar, obuhvata dvoje: 1. negiranje mahane i nedostatka, iz čega nužno proizlazi potvrđivanje savršenstva; 2. negiranje sličnosti nečega sa Njim u onim savršenim osobinama koje On ima i koje samo On zaslužuje. Razumijevanje "tenziha" kod mu'attila (onih koji Allahu negiraju svojstva) je sljedeće: oni negiraju Allahova svojstva savršenstva kojim je Sebe opisao i kojim Ga je opisao Poslanik, sallallahu alejhi ve sellem, kao što su sluh, vid, znanje, uzdizanje, dolazak radi presude na Sudnjem danu i sl. Po njihovom zaključivanju, svako onaj ko potvrdi neko od svojstava jeste antropomorfist. Prvi koji su uveli ovakvo negiranje jesu džehmije, a u tome su ih slijedile mutezile.

التَّنْزِيهُ: التَّبْرِئَةُ، والتَّنَزُّهُ: التَّباعُدُ والتَّرفُّع عن النَّقائصِ. وأصْلُه مِن النَّزْهِ، وهو: البُعْدُ.

English "Tanzeeh": exculpating one"s honor from faults. "Tanazzuh": keeping away and disdaining from imperfections. Original meaning: remoteness.
Español Absolución. Alejarse de las deficiencias. El origen de la palabra es alejamiento.
اردو التَّنْزِيهُ: بری قرار دینا۔ کہا جاتا ہے:’’نَزَّهْتُ عِرْضَهُ‘‘ یعنی میں نے اس کی عزت کو عیب سے بری قرار دیا ۔ ’تَنَزُّہْ‘ کا معنی ہے ’نقائص سے دور رہنا اور بچنا‘۔ یہ دراصل ’النَّزْه‘ سے ماخوذ ہے، جس کا معنی ہے:’ دور ہونا‘۔
Indonesia At-Tanzīh berarti pembebasan. At-Tanazzuh artinya saling menjauh dan menghindari berbagai kekurangan. Asalnya dari kata an-nazhu yang berarti jauh.
Bosanski "Et-tenzih" je odricanje, smatranje nečega čistim od nečega. Kaže se: nezzehtu irdahu: negirao sam svaku mahanu pri njemu. "Tenezzuh": udaljavanje i uzdizanje nad mahanama. Osnova riječi "en-nezh" je "el-bu'd", tj. daljina.
Русский Танзиху-Ллахи означает отрицание наличия у Всевышнего Аллаха каких-либо недостатков, а также отрицание подобия кого-либо Аллаху в Его атрибутах совершенства и красоты.

يُطلَقُ مُصطلح (تَنْزِيه) في العقيدة عند أهلِ الكَلام، ويُراد بِه: الإيمانُ بِذاتٍ للهِ مُجرَّدَةٍ عن جَمِيعِ الصِّفاتِ أو بَعضِها. كما يُطلَق عند بعضِهِم على وَصْفِه سُبحانَه بأنواعِ الصِفاتِ السّلبِيَّةِ التي تجعل وُجودَ اللهِ تعالى وُجوداً ذِهنِيّاً ل

التَّنْزِيهُ: التَّبْرِئَةُ، يُقال: نَزَّهْتُ عِرْضَهُ، أيْ: بَرَّأتُه مِن العَيْبِ. والتَّنَزُّهُ: التَّباعُدُ والتَّرفُّع عن النَّقائصِ، يُقال: نَزُهَ الرَّجُلُ، نَزاهَةً: إذا تَباعَدَ عن كلِّ مَكْرُوهٍ، فهو نَزِيهٌ، ونزَّهَ نفسَهُ عن القَبِيحِ، أيْ: أبعدَها عنه ونَحّاها. وأصْلُ النَّزْهِ: البُعْدُ، وتَنزِيهُ اللهِ تعالى: تَبْعِيدُهُ وتَقْديسُهُ عن الأنْدادِ والأشْباهِ وعمّا لا يَجوزُ عليه مِن النَّقائِصِ.

نزه

تهذيب اللغة : (6/92) - المحكم والمحيط الأعظم : (4/236) - النهاية في غريب الحديث والأثر : (5/43) - الفائق في غريب الحديث والأثر : (3/420) - التوقيف على مهمات التعاريف : (ص 110) - تاج العروس : (36/523) - التعريفات الاعتقادية : (ص 126) - الصفات الإلهية في الكتاب والسنة النبوية في ضوء الإثبات والتنزيه : (ص 143) - مجموع فتاوى ابن تيمية : (16/98) - منهاج السنة النبوية في نقض كلام الشيعة القدرية : (2/157) - شرح العقيدة الطحاوية : (1/71) - القول المفيد على كتاب التوحيد : (2/155) - الصفات الإلهية في الكتاب والسنة النبوية في ضوء الإثبات والتنزيه : (ص 145) - شرح الكوكب المنير : (1/418) -