أولو العزم من الرسل

English Messengers with firm resolution
Français Les Messagers doués de résolution.
Español Ulu Al 'Azm Min Ar-Rusul
اردو پیغمبرانِ اولوالعزم
Indonesia Rasul-rasul ulul azmi
Русский Стойкие и твердые духом посланники

ذووا القوة والصبر، وأصحاب الفضل وكمال الرأي، وأهل الثبات والجد ممن أوحى الله تعالى إليهم وأمرهم بتبليغ دينه، وهم: نوح وإبراهيم وموسى وعيسى ومحمد عليهم الصلاة والسلام.

English Messengers with strength and patience, and they are Nuh (Noah), Ibrahim (Abraham), Musa (Moses), 'Isa (Jesus) and Muhammad, may Allah's peace and blessings be upon them.
Français Les Messagers doués de force et de patience [parmi tous les Messagers et Prophètes] sont au nombre de cinq : Noé (« Nûh »), Abraham (« Ibrâhîm »), Moïse (« Mûssâ »), Jésus (« ‘Issâ ») et Mohammed (« Muhammad »). Que la paix et le salut soient sur eux tous.
Español Son los profetas con mayor determinación y paciencia, estos son Noé, Abraham, Moisés, Jesús, y Muhammad, que la paz y las bendiciones de Al-lah sean con todos ellos.
اردو جن رسولوں کی طرف اللہ تعالی نے وحی نازل فرمائی اور انہیں اپنے دین کی تبلیغ کا حکم دیا ان میں سے ہمت وصبر رکھنے والے، فضیلت و کمالِ رائے سے متصف، ثابت قدم اور جدو جہد کرنے والے پیغمبران جو نوح، ابراہیم، موسیٰ، عیسیٰ اور محمد علیہم الصلاۃ والسلام ہیں۔
Indonesia Rasul-rasul yang memiliki kekuatan dan kesabaran, memiliki keutamaan dan kecerdasan sempurna, memiliki keteguhan dan kesungguhan, kepada mereka Allah Ta’ālā menurunkan wahyu dan memerintahkan untuk menyampaikan agama-Nya, yaitu Nuh, Ibrahim, Musa, Isa, dan Muhammad 'alaihimuṣṣalātu wassalām.
Русский Обладатели особой силы, стойкости и терпения. Этими посланниками являются: Нух, Ибрахим, Муса, "Иса и Мухаммад, да пребудет над всеми мир и благословение Аллаха.

هم أنبياء الله تعالى الذين هم صفوة البشر وأتقاهم لله تعالى؛ وقد جعل الله بعض الرسل أكمل من بعض، وفضل بعضهم على بعض، وسبب ذلك: أن الله تعالى فضل من فضل منهم بإعطائه خيرا لم يعطه أحدا غيره، أو برفع درجته فوق درجة غيره، أو باجتهاده في عبادة الله تعالى والدعوة إليه، وقيامه بالأمر الذي وكل إليه، ومن هؤلاء أولوا العزم. وسموا بأولي العزم؛ لأنهم صبروا على أذى قومهم، وصبروا على المشاق والمتاعب، وتحملوا أكثر من غيرهم. ومعنى العزم الذي امتدحهم الله تعالى وفضلهم به: هو الحزم والصبر والقوة، والمقصود بالصبر: الصبر على أعباء الرسالة وأمانة أدائها وتحمل مشاقها، والصبر على أذى المرسل إليهم، مع الحزم في الدعوة والجد والقوة في أداء الرسالة وتبليغها. ومن مظاهر هذا التمايز والتفاضل: أن نوحا عليه السلام امتاز بأنه أول رسول أرسله الله، وأنه الأب الثاني للبشرية، وجميع الأنبياء الذين جاءوا من بعده كلهم من ذريته. وامتاز إبراهيم عليه السلام بأنه خليل الرحمن، وأن الله أكرمه بالكرامات المتنوعة؛ فجعل في ذريته النبوة والكتاب، وامتلأت قلوب الخلق من محبته، وألسنتهم من الثناء عليه. وامتاز موسى عليه السلام بأنه كليم الله، وأنه أعظم أنبياء بني إسرائيل، وأن شريعته وكتابه التوارة مرجع أنبياء بني إسرائيل وعلمائهم، وأن أتباعه أكثر أتباع الأنبياء غير أمة محمد صلى الله عليه وسلم. وأما عيسى عليه السلام فقد امتاز بأن الله سبحانه آتاه من البينات الدالة على صدقه، وأنه رسول الله حقا، فجعله يبرئ الأكمه والأبرص، ويحي الموتى بإذن الله، وكلم الناس في المهد صبيا، وأيده بروح القدس. وأما محمد صلى الله عليه وسلم فهو أفضل الرسل على الإطلاق، وخاتم النبيين، وإمام المتقين وسيد ولد آدم، صاحب المقام المحمود الذي يغبطه به الأولون والآخرون، وصاحب لواء الحمد والحوض المورود، وشفيع الخلائق يوم القيامة، وصاحب الوسيلة والفضيلة الذي بعثه بأفضل كتبه، وشرع له أفضل شرائع دينه، وجعل أمته خير أمة أخرجت للناس ...

English All prophets, may Allah's peace and blessings be upon them, are top in human perfection. They are the best humans and they fear Allah the most. However, perfection is of different degrees. Allah the Almighty made some of the Messengers more perfect than others and preferred some of them to others. Messengers with firm resolution come in the first rank. They are followed by the rest of of the Messengers, then the Prophets who were not sent to their nations, i.e. they were Prophets but not Messengers. The best among the slaves of Allah are His Prophets, and the best of His Prophets are the Messengers. The best of the Messengers are those with firm resolution, and the best of the resolute Messengers are the two close friends: Ibrahim and Muhammad, may Allah's peace and blessings be upon them, and the best of all of them is Muhammad, may Allah's peace and blessings be upon him. The ‘resolution' with which Allah praised and preferred them refers to firmness, patience, and strength. What is intended by patience in this context, is patience for the burden, trust and hardships of the message and patience for the harm of those to whom the messenger is sent, while being firm in calling people to Allah and being serious and strong in conveying the message.
Français Tous les Prophètes (sur eux la paix et le salut) constituent le summum de la perfection humaine. Ils sont l’élite des humains et ceux qui craignent le plus Allah. Toutefois, il y a des degrés dans la perfection et Allah (Gloire sur Lui) a fait de certains de Ses Messagers des personnes plus parfaites que d’autres tout comme Il en a élevé en mérite certains vis-à-vis d’autres. Ainsi, le premier rang est occupé par ceux que l’on désigne comme étant les Messagers doués de résolution ; ensuite, en dehors d’eux, les [simples] Messagers ; puis les Prophètes, ceux qui n’ont pas été envoyés à leurs communautés [respectives] mais à qui une Prophétie a été donnée et non un Message [à délivrer]. Donc, les meilleurs serviteurs d’Allah sont Ses Prophètes, puis Ses meilleurs Prophètes sont Ses Envoyés parmi eux, et enfin Ses meilleurs Envoyés sont Ses Messagers doués de résolution qui correspondent à certains de Ses Messagers. Et les deux meilleurs Messagers doués de résolution sont « les deux amis intimes d’Allah » (« Al Khalîlân ») : Abraham et Mohammed, sur eux deux la paix et le salut. Néanmoins, et de manière absolue, le meilleur d’entre les Messagers est notre Prophète Muhammad (sur lui la paix et le salut). Le mot : « Al ‘Azm », par lequel Allah les a complimentés et élevés en mérite sur les autres, signifie : la détermination, la patience, la force, etc. Ici, la patience signifie la patience sur la lourde responsabilité du Message [à délivrer] et du Dépôt à s’acquitter mais aussi à en supporter [son fardeau et] sa difficulté. C’est aussi l’endurance vis-à-vis du tort subi de la part des gens à qui les Messagers ont été envoyés. Et tout ceci en étant déterminé dans l’appel aux gens, en s’efforçant avec fermeté de s’acquitter et de transmettre le Message à délivrer [aux gens].
Español Todos los Profetas, la paz y bendiciones de Al-lah sea con ellos, son la máxima expresión de la perfección humana y los más piadosos y pudorosos. Sin embargo, Al-lah escogió de entre los Profetas a Ulu Al 'Azm colocándolos en el más alto nivel, seguidos por el resto de ellos, después vienen los enviados y mensajeros a los que no se les dio un mensaje como tal. Al 'Azm significa determinación y paciencia, porque ellos tuvieron paciencia con la gente a la que fueron enviados, soportaron todo tipo de insultos, desprecios y castigos, pero su determinación de divulgar el mensaje que les fue revelado nunca se debilitó.
اردو پیغمبرانِ اولوالعزم: یہ اللہ تعالی کے انبیاء ہیں جو تمام انسانوں میں برگزیدہ اور اللہ کا سب سے زیادہ تقویٰ رکھنے والے ہیں۔ اللہ تعالی نے بعض رسولوں کو بعض کے مقابلے میں زیادہ کامل بنایا اور ان میں سے بعض کو بعض پر فضیلت دی۔ اس کا سبب یہ ہے کہ اللہ تعالیٰ نے ان میں سے جسے فضیلت بخشی اسے کوئی ایسا خیر عطا فرمایا جو اس کے علاوہ کسی اور کو نہیں عطا کیا، یا یہ کہ دوسروں پر اس کا درجہ بلند فرمایا، یا پھر اللہ تعالی کی عبادت میں ان کی محنت وکاوش، دعوت الی اللہ اور جو کام انہیں سونپا گیا تھا اسے بخوبی انجام دینے کی وجہ سے انہیں یہ فضیلت حاصل ہوئی۔ انہیں اولوالعزم کا نام دیا گیا کیونکہ انہوں نے اپنی قوم کی طرف سے دی جانے والی اذیت اور مصائب و آلام پر صبر کیا اور دوسروں سے زیادہ تحمل اور برداشت کا مظاہرہ کیا۔ عزم جس کی بنا پر اللہ نے ان کی تعریف کی اور جس کی وجہ سے انہیں فضیلت دی اس کا معنی دور اندیشی، صبر اور قوت ہے۔ صبر سے مقصود یہ ہے کہ بارِ رسالت اور اس کی ادائیگی کی امانت پر صبر کیا جائے اور اس سلسلے میں پیش آنے والی دشواریوں کو برداشت کیا جائے اور جن کی طرف رسول بنا کر بھیجا گیا ہے ان کی طرف سے دی جانے والی اذیت پر صبر کیا جائے اور اس کے ساتھ ساتھ دعوت میں دور اندیشی اور پیغامِ رسالت کی ادائیگی اور تبلیغ میں پوری کوشش و طاقت صرف کی جائے۔ اس باہمی امتیاز وفضیلت کے کچھ مظاہر یہ ہیں: نوح علیہ السلام کی امتیازی خصوصیت یہ ہے کہ وہ اللہ کی طرف سے بھیجے جانے والے سب سے پہلے رسول ہیں اور تمام انسانوں کے والدِ ثانی ہیں اور ان کے بعد جتنے انبیاء آئے وہ سب انہی کی نسل سے ہیں۔ ابراہیم علیہ السلام کا امتیاز یہ ہے کہ وہ خلیل اللہ ہیں اور اللہ تعالی نے انہیں مختلف اعزازات سے نوازا۔ اللہ نے ان کی اولاد میں نبوت اور آسمانی کتب کا سلسلہ جاری فرمایا اور مخلوق کے دل ان کی محبت اور زبانیں ان کی تعریف سے لبریز ہو گئیں۔ موسی علیہ السلام کو یہ امتیازی شان حاصل ہے کہ وہ کلیم اللہ ہیں اور بنی اسرائیل کے سب سے عظیم پیغمبر ہیں۔ ان کی شریعت اور کتاب تورات ہے جو بنی اسرائیل کے انبیاء اور علماء کے لئے مرجع کی حیثیت رکھتی ہے اور ان کی اتباع کرنے والے ماسوا محمد ﷺ کی امت کے، تمام انبیاء کے متبعین سے زیادہ ہیں۔ عیسی علیہ السلام کو یہ امتیاز ملا کہ اللہ سبحانہ و تعالی نے انہیں ان کی صداقت اور اللہ کے سچے رسول ہونے پر دلالت کرنے والے واضح دلائل عطا فرمائے۔ چنانچہ وہ اللہ کے حکم سے مادر زاد اندھے اور کوڑھی کو صحت یاب اور مردوں کو زندہ کر دیتے تھے۔ وہ ابھی گود کے بچے تھے کہ لوگوں سے ہم کلام ہوئے اور اللہ نے روح القدس کے ذریعے ان کی مدد فرمائی۔ محمد ﷺ علی الاطلاق سب سے افضل رسول، خاتم النبیین، امام المتقین اور اولادِ آدم کے سردار ہیں اور آپ اس مقامِ محمود والے ہیں جس پر پچھلے اور اگلے سب رشک کریں گے۔ آپ ﷺ الحمد کے جھنڈے والے، حوض کوثر کے ساقی، قیامت کے دن لوگوں کی شفاعت کرنے والے اور صاحبِ وسیلہ و فضیلت ہیں، جنہیں اللہ تعالیٰ نے سب سے زیادہ فضیلت والی کتاب دے کر بھیجا اور جن کے لیے سب سے افضل احکام و شرائع مقرر فرمائے، جن کی امت کو بہترین امت قرار دیا جو لوگوں کے لیے مبعوث کی گئی ہے۔ ۔ ۔
Indonesia Mereka adalah nabi-nabi yang merupakan manusia pilihan dan paling bertakwa kepada Allah Ta’ālā. Allah telah menjadikan sebagian rasul lebih sempurna dari sebagian yang lain, dan mengutamakan sebagian mereka atas sebagian yang lain. Yang demikian itu disebabkan karena Allah Ta’ālā telah mengutamakan sebagian mereka, dengan memberikan kebaikan yang tidak diberikan kepada yang lain, mengangkat derajatnya di atas derajat yang lain, atau karena kesungguhannya dalam beribadah kepada Allah Ta’ālā dan berdakwah kepada-Nya, serta menunaikan perintah yang dibebankan, di antara mereka adalah ulul azmi. Dinamakan ulul azmi karena mereka sabar terhadap gangguan kaumnya, sabar terhadap berbagai kesulitan, dan lebih tabah dari yang lain. "Al-‘Azm" yang merupakan sebab Allah Ta’ālā memuji dan mengutamakan mereka, artinya ketegasan, kesabaran, dan kekuatan. Sabar yang dimaksud ialah sabar terhadap beban risalah dan amanah menyampaikannya, sabar terhadap kesulitan-kesulitannya, juga sabar terhadap gangguan orang yang didakwahi disertai sikap tegas dalam berdakwah, serta kesungguhan dan kekuatan dalam menunaikan dan menyampaikan risalah. Di antara potret perbedaan keistimewaan dan keutamaannya, bahwa Nuh 'alaihissalām memiliki keistimewaan sebagai rasul pertama yang diutus oleh Allah, sebagai bapak kedua bagi manusia, dan semua nabi yang datang setelahnya merupakan keturunannya. Sedangkan Ibrahim ‘alaihi as-salām memiliki keistimewaan sebagai khalilurrahman (kekasih Allah) dan Allah menganugerahinya berbagai karamah, lalu menjadikan kenabian dan al-Kitab (wahyu) pada anak keturunannya, serta hati manusia penuh dengan cinta kepadanya dan lisan mereka dengan memujinya. Nabi Musa ‘alaihissalām memiliki keistimewaan sebagai kalimullah (Allah berbicara langsung kepadanya) dan sebagai nabi paling agung di antara nabi-nabi Bani Israel, juga syariat dan kitab Taurat yang diturunkan kepadanya merupakan referensi para nabi dan ulama Bani Israel, dan pengikutnya adalah pengikut nabi yang paling banyak setelah umat Muhammad ṣallallāhu ‘alaihi wa sallam. Adapun Isa ‘alaihissalām memiliki keistimewaan bahwa Allah Subḥānahu wa Ta’ālā memberikannya berbagai mukjizat yang menunjukkan kebenarannya, bahwa dia benar utusan Allah; Allah memberikannya kemampuan menyembuhkan orang yang buta dan kusta serta menghidupkan orang yang mati dengan izin Allah, dia berbicara kepada manusia ketika masih bayi dalam buaian, dan memberinya kekuatan dengan Ruhulqudus. Adapun Muhammad ṣallallāhu ‘alaihi wa sallam, beliau adalah rasul yang paling utama secara mutlak, penutup semua nabi, imam orang-orang yang bertakwa dan pemimpin anak Adam, pemilik “kedudukan terpuji” yang membuat iri orang-orang pertama dan terakhir, pemilik panji pujian dan telaga yang didatangi, pemberi syafaat pada hari Kiamat, dan pemilik kedudukaan dan keutamaan, yang diutus dengan kitab suci dan syariat paling utama, serta umatnya dijadikan sebaik-baik umat yang dilahirkan untuk manusia.
Русский Абсолютно все пророки, мир им и благословение Аллаха, обладали в высшей степени совершенными качествами, которые только могут быть присущи человеку. Они – наилучшие представители человечества, и были самыми набожными и богобоязненными рабами Аллаха. Однако их совершенство разнится в степенях. Всевышний Аллах возвысил одних из них над другими по степеням, и одним из них отдал предпочтение перед другими. На самой высшей ступени находятся обладатели непоколебимой решимости и твердые духом посланники. После них идут остальные посланники, а затем пророки, которые отличаются от посланников тем, что им не посылались новые Писания и новый закон, и они обязаны были доносить до своей общины Писание и закон, предыдущего Посланника. Самыми лучшими рабами Аллаха являются Его пророки, затем Его посланники, а среди посланников – «твердые духом»: Нух, Ибрахим, Муса, "Иса и Мухаммад. Наилучшими среди «твердых духом» – двое, которых Аллах сделал Своими возлюбленными: Ибрахим и Мухаммад, мир им обоим и благословение Аллаха. А наш пророк Мухаммад, мир ему и благословение Аллаха, является самым почитаемым, избранным и абсолютно лучшим из творений. Стойкость духа, за которую Аллах похвалил этих посланников, и которой Он отличил их от остальных пророков и посланников, означает, что эти пророки отличились особой решительностью, терпеливостью и силой. Они проявили высшее терпение и стойкость, перенося трудности и беды на пути веры и религии. Они с невиданным терпением сносили причиняемые людьми страдания и с непоколебимой решимостью и усердием призывали их к Аллаху.

يرد مصطلح (أولو العزم من الرسل) في العقيدة في عدة أبواب، منها: باب توحيد الألوهية عند الكلام عن الشفاعة، وباب: الإيمان، عند الكلام عن زيادة الإيمان ونقصانه وتفاضل أهل الإيمان، وباب: الإيمان باليوم الآخر، عند الكلام عن أحوال الناس يوم القيامة، وغير ذلك.

طريق الهجرتين وباب السعادتين : (ص 350) - تفسير ابن كثير : (2/47) - تفسير الطبري : (24/26) - تفسير القرطبي : (16/22) - شرح العقيدة الطحاوية : (2/424) - لوامع الأنوار البهية : (2/299) - معارج القبول بشرح سلم الوصول إلى علم الأصول : (2/403) - كتاب أصول الإيمان في ضوء الكتاب والسنة : (ص 167) - الرسل والرسالات : (ص 217) -