أَفْعَالُ الـمُكَلَّفِينَ

English Deeds of the liable
اردو مکلَّفینْ کے افعال
Indonesia Perbuatan-perbuatan mukalaf

كُلُّ مَا يَصْدُرُ عَنِ العِبَادِ مِنْ قَوْلٍ أَوْ عَمَلٍ أَوْ اعْتِقَادٍ.

English Anything people who are competent for religious duties according to the Shariah say, do, or believe.
اردو بندوں سے صادر ہونے والا ہر قول، عمل اور عقیدہ۔
Indonesia Segala sesuatu yang bersumber dari manusia, baik berupa ucapan, perbuatan atau keyakinan.

أَفْعَالُ المُكَلَّفِينَ عِبَارَةٌ عَنْ أَقْوَالِ الإِنْسَانِ بِلِسَانِهِ وَأَعْمَالِهِ بِجَوَارِحِهِ وَاعْتِقَادَاتِهِ بِقَلْبِهِ ، وِمِنْ أَهَمِّ شُرُوطِ التَّكْلِيفِ: عِلْمُ الإِنْسَانِ بِمَا كُلِّفَ بِهِ ، وَالقُدْرَةُ عَلَى فَهْمِ خِطَابِ الشَّرْعِ ، وَالعَقْلُ بِمَعْنَى: عَدَمِ الجُنونِ ، وَالبُلُوغُ ، وَالقُدْرَةُ عَلَى مَا كُلِّفَ بِهِ ، وَالاخْتِيَارُ بِمَعْنَى: عَدَمُ الإِكْرَاهِ .

English "Af‘āl al-mukallafeen" (deeds of the liable) refers to all one's sayings, deeds, and beliefs. The most important conditions of "takleef" (liability under the Shariah) are: 1. Knowing what is required. 2. Having the ability to understand the Shariah address. 3. Sanity, i.e. not being mad. 4. Having reached puberty. 5. Having the ability to carry out religious duties. 6. Having the ability to choose, i.e. not being forced.
اردو مکلفین کے افعال سے مراد انسان کی زبان سے نکلنے والے اقوال، اس کے اعضاء سے سر انجام پانے والے اعمال اور دل کے اعتقادات ہیں۔ تکلیف (یعنی انسان کو کسی فعل کا مکلف بنانے) کی اہم ترین شرائط حسب ذیل ہیں: • انسان کا اس فعل سے باخبر ہونا جس کی ذمہ داری اس پر ڈالی گئی ہو۔ • فرمانِ شریعت کو سمجھنے کی صلاحیت کا موجود ہونا۔ • عقل کو موجود ہونا یعنی پاگل پن نہ ہونا۔ • بلوغت۔ • انسان کو جس فعل کا مکلف بنایا گیا ہے اسے بجالانے کی اُس میں قدرت و استطاعت کا پایا جانا۔ • مکلف انسان کا بااختیار ہونا بایں معنی کہ وہ اس فعل کو کرنے پر مجبور نہ ہو۔
Indonesia Af'āl al-mukallafīn adalah ungkapan untuk ucapan seseorang dengan lisannya, amalannya dengan anggota tubuhnya dan keyakinannya dengan hatinya. Di antara syarat at-taklīf yang paling penting adalah pengetahuan seseorang terhadap apa yang dibebankan padanya, mampu memahami pesan syariat, berakal -artinya tidak gila-, balig, mampu melaksanakan perkara yang dibebankan kepadanya, dan atas pilihan pribadi -artinya tidak dipaksa-.

يَرِدُ مُصْطَلَحُ (أَفْعَالِ المُكَلَّفِينَ) فِي مَوَاطِنَ أُخْرَى مِنْهَا: بَابُ التَّحْسِينِ وَالتَّقْبِيحِ ، وَبَابُ القِيَاسِ ، وَبَابُ الاجْتِهَادِ وَأَنْواعِهِ.

نهاية السول شرح منهاج الأصول : (1/ 40) - مبادئ الأصول : (2/ 129) - مبادئ الأصول : (ص14) - الوجيز في أصول الفقه : (389/1) - كتاب التلخيص في أصول الفقه : (160/1) - قواطع الأدلة : (302/1) -