حِيازَةٌ

اردو قبضہ میں لینا، تحویل میں لینا
Indonesia Menguasai

قَبْضُ الشَّيْءِ وامْتِلاكُهُ مع حُرِّيَّةِ التَّصَرُّفِ فيه.

اردو کسی شے کو اس طرح سے قبضے اور تحویل میں لینا کہ اس میں تصرف کرنا ممکن ہوجائے۔
Indonesia Menerima sesuatu dan memilikinya disertai kebebasan mengelolanya.

الحِيازَةُ: قَبْضُ الشَّيءِ وامتِلاكُه مع التَّصَرُّفِ فيه والاِنْتِفاعِ بِهِ انْتِفاعَ المُلاَّكِ، وتُعْتَبَرُ عَلامَةً على تَمَلُّكِ الشَّخْصِ لِلشَّيْءِ المَحُوزِ، وإن كانت لا تَنْقُلُ المُلْكَ إِلَيْهِ، إذ هي سُلْطَةٌ فِعْلِيَّةٌ على الشَّيْءِ يُمارِسُها الشَّخْصُ الذي قد يكون مالِكاً لذلك الشَّيْءِ، وقد لا يكون كذلك. وتَحْصُلُ الحِيازَةُ بِشَتَّى أَنْواعِ التَّصَرُّفِ والاِنْتِفاعِ، كالرُّكوبِ والسُّكْنَى والبَيْعِ وغَيْرِ ذلك، وهذه التَّصَرُّفاتُ على مراتِبٍ: أَضْعَفُها: السُّكْنَى والزَّرْعُ. ويَلِيها: الهَدْمُ والبِناءُ والغَرْسُ. ثمّ يلِيها البَيْعُ والهِبَةُ، والصَّدَقَةُ، والعِتْقُ، وكُلُّ ما يَفْعَلُهُ الشَّخْصُ في مالِهِ. وقد تكون الحِيازَةُ بِطَرِيقٍ شَرْعِيٍّ مُباحٍ، أو بِطَرِيقٍ غَيْرِ شَرْعِيٍّ، كَالسَّرِقَةِ والغَصْبِ. وتكون الحِيازَةُ سَبَباً مِن أَسْبابِ المِلْكِيَّةِ إذا تَعَلَّقَت بِمالٍ مُباحٍ ليس في مُلْكِ أَحَدٍ وَقْتَ وَضْعِ اليَدِ علَيْهِ، ولم يُوجَدْ مانِعٌ شَرْعِيٌّ يَمْنَعُ مِن تَمَلُّكِهِ، ويَشْمَلُ ذلك أَنْواعاً أَرْبَعَةً، وهي: إِحْياءُ المَواتِ، والاِصْطِياد، وأَخْذ الكَلَإِ، وأَخْذ ما يُوجَدُ في بَطْنِ الأَرْضِ، كالرِّكازِ.

اردو ”حیازہ“ سے مراد ہے کسی شے کو قبضہ میں لینا اور اس کا مالک بننا اور اس میں تصرف کرنا اور اس سے یوں نفع اٹھانا جیسے صاحبِ ملکیت اٹھایا کرتا ہے۔ حیازہ (قبضہ) اس بات کی علامت سمجھا جاتا ہے کہ آدمی قبضہ شدہ شے کا مالک ہے، اگرچہ اس سے ملکیت اس کی طرف منتقل نہیں ہوتی ہے۔ کیونکہ حیازہ (قبضہ) کسى چیز پر حقیقی اختیار (حق) کا نام ہے جسے وہ شخص استعمال کرتا ہے جو کبھی تو اس چیز کا مالک ہوتا ہے اور کبھی ایسا نھیں ہوتا۔ ’حیازہ‘ (کسی چیز پر قبضہ) کئی طرح کے تصرفات اور استعمال سے حاصل ہوتا ہے مثلاً سواری کرنا، رہائش اختیار کرنا اور بیچنا وغیرہ۔ ان تصرفات کے کئی درجات ہیں: ان میں سب سے کمزور تصرف رہائش اور کاشت کاری ہے۔ اس کے بعد منہدم کرنا، تعمیر کرنا، اور درخت لگانا ہے۔ اور اس کے بعد بیچنا، ہبہ کرنا، صدقہ کرنا، آزاد کرنا اور ہر وہ تصرف ہے جسے کوئی شخص اپنے مال میں کرتا ہے۔ ’حیازہ‘ کبھی جائز شرعی طریقہ سے ہوتا ہے اور کبھی ناجائز اور غیر مشروع طریقہ سے، جیسے چوری اورغصب کے ذریعہ۔ نیز حیازہ ملکیت کا ایک سبب بھی بن سکتا ہے اگر کسی نے کسی ایسے مال پر قبضہ کرلیا ہو جو مباح ہو، قبضہ کے وقت اس کا کوئی مالک نہ ہو اور شرعی طور پر اس کا مالک بننا ممنوع بھی نہ ہو۔ اور ایسا حیازہ چار چیزوں میں ہو سکتا ہے جو یہ ہیں: غیرآباد زمین کو آباد کرنا، شکار کرنا، گھاس لینا اور زیرِ زمین پائی جانے والی چیزوں کو لینا، جیسے گڑا ہوا خزانہ۔
Indonesia Al-Ḥiyāzah adalah menerima sesuatu dan memilikinya disertai kebebasan mengelolanya dan memanfaatkannya sebagai pemilik. Al-Ḥiyāzah dianggap sebagai tanda kekuasaan seseorang atas sesuatu yang diterima, meskipun kepemilikannya tidak berpindah kepadanya. Sebab al-ḥiyāzah adalah kekuasaan faktual terhadap sesuatu yang dilakukan seseorang yang bisa jadi pemiliknya dan bisa jadi bukan pemiliknya. Al-Ḥiyāzah diperoleh dengan berbagai bentuk pengelolaan dan pemanfaatan, seperti mengendarai, menempati, menjual dan lainnya. Tindakan-tindakan ini bertingkat-tingkat: yang paling lemah adalah menempati dan menanami. Kemudian meruntuhkan, membangun dan menanam. Selanjutnya menjual, memberikan, menyedekahkan, memerdekakan, dan segala sesuatu yang biasa dilakukan seseorang terhadap hartanya. Al-Ḥiyāzah terkadang terjadi dengan cara syar'i yang dibolehkan dan terkadang terjadi dengan cara yang tidak syar'i, seperti mencuri dan merampok. Al-Ḥiyāzah menjadi salah satu di antara sebab-sebab kepemilikan apabila berkaitan dengan harta yang dibolehkan, tidak dalam kepemilikan orang lain saat menguasainya, serta tidak ada penghalang syar'i yang mencegah memilikinya. Hal ini mencakup empat macam cara kepemilikan; yakni menghidupkan (mengelola) tanah tak bertuan, berburu, mengambil rerumputan dan mengambil harta yang ada di dalam bumi, seperti rikāz (harta kaum jahiliah yang ditemukan di dalam tanah).

الحِيازَةُ: الجَمْعُ وضَمُّ الشَّيْءِ، وتأْتي بِمعنى قَبْضِ الشَّيْءِ وامْتِلاكِهِ.

اردو الحِیازَۃُ: کسی شے کو ملانا اوراکٹھا کرنا۔ یہ کسی شے کو قبضہ اور ملکیت میں لینے کے معنی میں بھی آتا ہے۔
Indonesia Al-Ḥiyāzah berarti mengumpulkan dan menggabungkan sesuatu. Makna lainnya menerima sesuatu dan memilikinya.

يَرِد مُصْطلَحُ (حِيازَة) في الفقه في كتاب البَيْعِ، باب: الهِبَة، وباب: الصَّدَقَة، وباب: الغَصْب، وباب: الوَقْف، وباب: الرَّهْن، وفي كِتاب المَوارِيث، باب: قِسْمَة التَّرِكَةِ، وفي كتاب الجِهادِ، باب: قِسْمَة الغَنِيمَةِ، وغَيْر ذلك مِن الأبْوابِ.

الحِيازَةُ: الجَمْعُ وضَمُّ الشَّيْءِ، يُقال: حازَ المالَ، حَوْزاً، وحِيازَةً، واحْتازَهُ احْتِيازاً، أيْ: جَمَعَهُ وضَمَّهُ إلَيْهِ. وتأْتي الحِيازَةُ بِمعنى قَبْضِ الشَّيْءِ وامْتِلاكِهِ، وكُلُّ مَن قَبَضَ شَيْئاً فقد حازَهُ. وحِيازَةُ الأَرْضِ: إِحْياؤُها وإِعْلامُ حُدودِها.

حاز

حاشية الدسوقي على الشرح الكبير : (4/233) - البهجة في شرح التحفة : (1/168) - القوانين الفقهية : (ص 328) - القاموس الفقهي : (ص 105) - معجم لغة الفقهاء : (ص 189) - مواهب الجليل في شرح مختصر خليل : (6/221) -