تَرِكَةٌ

اردو ترکہ ، مرنے والے شخص کا چھوڑا ہوا مال اور حق جس کے حقدار اس کے وارثین بنتے ہوں، مال وراثت۔
Indonesia Harta peninggalan

كُلُّ مالٍ أو حَقِّ يُـخَلِّفُهُ الشَّخْصُ بعد مَوْتِهِ.

اردو ہر وہ مال یا حق جسے آدمی اپنی موت کے بعد دنیا میں پیچھے چھوڑ کر چلا جاتا ہے۔
Indonesia Setiap harta atau suatu hak yang ditinggalkan seseorang setelah wafat.

التَّركَةُ: هي كُلُّ ما يَتْرُكُهُ الـمَيِّتُ من الأَمْوالِ والحُقوقِ، فَيَدْخُلُ في ذلك ما كان له مِنْ مالٍ أثْناءَ حَياتِهِ، وما خَلَّفَهُ بعد مَـماتِهِ مِنْ مالٍ، أو حَقٍّ، كَحَقِّ الشُّفْعَةِ، وخِيارِ الشَّرْطِ والرُّؤْيَةِ في البَيْعِ، كما يَدْخُلُ في ذلك الـمَنافِعُ أيضاً، فتكون لِلْوَرَثَةِ مِن بعدِهِ، إلا إذا كانت الـمَنْفَعَةُ مُؤَقَّتَةً بِـمُدَّةِ حَياتِهِ، كَالوَصِيَّةِ.

اردو ترکہ: ہر وہ مال یا حق جسے مرنے والا اپنے پیچھے چھوڑ کر چلا جاتا ہے چنانچہ اس میں وہ مال بھی شامل ہے جو آدمی کی زندگی میں اس کی ملکیت میں تھا اور وہ سب بھی شامل ہے جو مرجانے پر وہ پیچھے چھوڑ جاتا ہے چاہے وہ کوئی مال ہو یا کوئی حق ہو، حق سے مراد حقِ شفعہ اور بیع میں خیارِ شرط اور خیارِ رویت وغیرہ جیسے حقوق ہیں۔ اس میں منافع بھی شامل ہیں چنانچہ اس شخص کے مرنے کے بعد یہ منافع اس کے ورثاء کو ملیں گے اِلّا یہ کہ کوئی ایسی منفعت جو اس کی زندگی کے ساتھ موقت ہو جیسے وصیت۔
Indonesia At-Tarikah ialah segala benda yang ditinggalkan oleh mayat berupa harta dan hak-hak. Termasuk di dalamnya harta yang dimilikinya saat masih hidup, dan harta atau hak yang ditinggalkan setelah kematiannya seperti: hak Syuf'ah, khiyar syarat, dan melihat dalam jual-beli. Termasuk juga di dalamnya berupa ragam manfaat, yang dapat menjadi hak milik ahli waris setelahnya. Kecuali jika manfaat tersebut bersifat sementara yang temponya hanya semasa hidup, seperti halnya wasiat.

التَّرِكَةُ: ما يَتْرُكُهُ الشَّخْصُ ويَدَعُهُ ويُبْقِيهِ بَعْدَهُ.

اردو ترکہ: وہ اشیاء جو آدمی اپنی موت کے بعد دنیا میں چھوڑ کر جاتا ہے۔
Indonesia At-Tarikah ialah sesuatu yang ditinggalkan, dibiarkan, dan disimpan seseorang setelah kematiannya.

يَرِد مُصْطلَح (تَرِكَة) في الفقه في كتاب الـمَوارِيثِ، باب: شُروط الإِرْثِ، وباب: الإِرْث بِالتَّقْديرِ.

التَّرِكَةُ: ما يَتْرُكُهُ الشَّخْصُ ويَدَعُهُ ويُبْقِيهِ بَعْدَهُ، يُقالُ: تَرَكْتُ الشَّيْءَ، أَتْرُكُهُ، تَرْكاً، أيْ: خَلَّيتُهُ وخلَّفْتُهُ وَرائِي. والتَّرِكَةُ: الشَّيْءُ المَتْروكُ، مَأْخُوذَةٌ من التَّرْكِ، وهو: المُفارَقَةُ، يُقالُ: تَرَكْتُ الـمَنْزِلَ، تَرْكاً، أيْ: رَحَلْتُ عنه وفارَقْتُهُ. ويأتي بِمعنى الإِبْقاءِ والرَّفْضِ، والجَمْعُ: تَرِكاتٌ.

ترك

المحكم والمحيط الأعظم : (6/766) - المفردات في غريب القرآن : (ص 74) - مختار الصحاح : (ص 83) - التوقيف على مهمات التعاريف : (ص 172) - مغني الـمحتاج فـي شرح الـمنهاج : (3/3) - كشاف القناع عن متن الإقناع : (4/402) - القاموس الفقهي : (ص 49) - الموسوعة الفقهية الكويتية : (11/206) - حاشية ابن عابدين : (5/500) - لسان العرب : (10/405) -