قديم

اردو قدیم
Indonesia Al-Qadīm

الموجود الذي ليس لوجوده ابتداء، والذي لم يزل موجودا.

اردو ایسی موجود ذات، جس کے وجود کی کوئی ابتدا نہیں ہے اور جو ہمیشہ سے موجود رہی ہے۔
Indonesia Żat Yang Ada dimana keberadaan-Nya tidak diawali oleh permulaan, dan terus-menerus ada.

لفظ القديم فيه إجمال: فقد يراد به ما لم يسبقه عدم، أو الشيء المعين الذي ما زال موجودا ليس لوجوده أول ولا ابتداء، السابق للأشياء كلها الذي لم يشاركه غيره في وجوده الأزلي، وهو المعبر عنه بالقدم الذاتي المختص بالباري سبحانه وهو معنى قولهم: ما لا ابتداء لوجوده. وقد يراد به الشيء الذي يكون شيئا بعد شيء. والقديم ليس من الأسماء الحسنى؛ لأنه لا يدل على الكمال، فإن القديم يطلق على السابق لغيره، سواء كان حادثا أم أزليا، وأسماء الله تعالى كلها حسنى لا تحتمل النقص بأي وجه. والأول الذي لم يزل موجودا هو أحق بلفظ القدم من المسبوق بالعدم. ومن أسماء الله -عز وجل- الأول، قال تعالى (هو الأول والآخر والظاهر والباطن وهو بكل شيء عليم )

اردو لفظِ قدیم میں اجمال ہے۔ کبھی اس سے وہ چیز مراد لی جاتی ہے، جس سے پہلے کسی شے کا وجود نہ رہا ہو یا وہ معین شے مراد لی جاتی ہے، جو ہمیشہ سے موجود رہی ہو؛ تاہم اس کے وجود کی کوئی ابتدا وآغاز نہ ہو، وہ ساری اشیا سے پہلے ہو، جس نے اپنے ازلی وجود میں کسی شے کو شریک نہ بنایا ہو۔ اسی کو بالفاظ دیگر ’قِدَمِ ذاتی‘ کہتے ہیں، جو اللہ سبحانہ وتعالی کے ساتھ خاص ہے۔ متکلمین کے قول ”جس کے وجود کی کوئی ابتدا نہ ہو“ سے یہی مراد ہے۔ اور کبھی قدیم سے وہ شے مراد لی جاتی ہے، جو کسی شے کے بعد ہو۔ ’قدیم‘ اللہ تعالی کے اسمائے حسنی میں سے نہیں ہے؛ اس لیے کہ اس میں کوئی ایسی چیز نہیں پائی جاتی، جو صفتِ کمال پر دلالت کرے۔ کیوں کہ قدیم کا اطلاق دوسری شے سے پہلے والی شے پر ہوتا ہے؛ خواہ وہ حادث ہو یا ازلی۔ جب کہ اللہ کے سارے نام اچھے ہیں، ان میں کوئی کمی نہیں در آ سکتی ہے۔ لفظ ’اوّل‘ جو ہمیشہ سے موجود ہونے کا معنی دیتا ہے، یہ قدیم جو مجرد سبقت کرجانے کا معنی دیتا ہے، سے کہیں زیادہ حق دار ہے (کہ اسے اسمائے حسنی میں رکھا جائے، نہ کہ قدیم کو)۔ ’أوَّلْ‘ اللہ عز وجلّ کے اسمائے حسنی میں سے ہے، جیسا کہ فرمانِ باری تعالی ہے: ’’هُوَ الْأَوَّلُ وَالْآخِرُ وَالظَّاهِرُ وَالْبَاطِنُ وَهُوَ بِكُلِّ شَيْءٍ عَلِيمٌ‘‘(الحدید:۳) یعنی وہی پہلے ہے اور وہی پیچھے، وہی ظاہر ہے اور وہی مخفی اور وه ہر چیز کو بخوبی جاننے والا ہے۔
Indonesia Lafal al-qadīm mengandung (makna) global. Kadang maksudnya sesuatu yang tidak didahului oleh ketiadaan, atau sesuatu tertentu yang terus-menerus ada dan keberadaannya tidak memiliki awal dan permulaan; yang mendahului segala sesuatu yang eksistensi azalinya tidak disertai oleh yang lain, inilah yang diungkapkan dengan (istilah) al-qidam aż-żātī yang menjadi kekhususan Allah Sang Pencipta -Subḥānahu-. Inilah makna ucapan mereka: sesuatu yang keberadaannya tidak memiliki permulaan. Kadang juga maksudnya sesuatu yang ada setelah sesuatu lain. Lafal al-qadīm tidak termasuk nama-nama Allah yang indah karena tidak menunjukkan kesempurnaan. Karena kata al-qadīm digunakan untuk sesuatu yang mendahului yang lain, baik merupakan sesuatu yang baru ataupun azali, sedangkan nama-nama Allah -Ta'ālā- seluruhnya indah, baik, dan terpuji tidak mengandung cacat apapun. Allah Yang Mahaawal yang terus-menerus ada lebih berhak dengan kata "al-qidam" daripada yang didahului oleh ketiadaan. Di antara nama-nama Allah -'Azza wa Jalla- adalah al-Awwal. Allah -Ta'ālā- berfirman, "Dia-lah Yang Awal dan Yang Akhir, Yang Zahir dan Yang Batin, dan Dia Maha Mengetahui segala sesuatu."

نقيض الحديث، وهو ما مضى على وجوده زمن طويل، وأصل القديم في اللسان: السابق، والقدم: العتق. يقال: قدم الشيء – بالضم – قدما: خلاف حدث، والجمع: قدماء، وقدامى.

اردو ’قدیم‘ حدیث (نئی شے) کی ضد ہے۔ قدیم اسے کہتے ہیں، جس کے وجود پر ایک لمبا عرصہ گزر چکا ہو۔ بول چال میں قدیم کے اصل معنی ہیں سبقت کرنے والا۔ ’قِدَمْ‘ بمعنی عِتق یعنی قدیم ہونا۔ کہاجاتا ہے: ’قَدُمَ الشیءُ، قِدَمًا‘ (دال کے پیش کے ساتھ) یعنی چیز بہت پرانی ہوگئی۔ یہ حَدَثْ یعنی جدت کی ضد ہے۔ اس کی جمع’قُدَماء‘ اور ’قُدامی‘ آتی ہے۔
Indonesia Antonim kata al-ḥadīṡ (yang baru); yaitu sesuatu yang telah ada sejak lama. Asal arti al-qadīm secara bahasa adalah yang terdahulu. Al-Qidam: kuno. Dikatakan "qaduma asy-syai'u—dengan damah—qidaman", adalah lawan kata hadaṡa (baru). Bentuk jamaknya: qudamā` dan qudāmā.

يطلق مصطلح (القديم) على الموجود الذي لا يكون وجوده من الغير، وهو القديم بالذات، ويقابله الحادث بالذات. وقد يطلق أيضا على الموجود الذي ليس وجوده مسبوقا بالعدم، وهو القديم بالزمان، ويقابله المحدث بالزمان. والقدم الذاتي: هو كون الشيء غير محتاج إلى الغير. والقدم الزماني: هو كون الشيء غير مسبوق بالعدم.

نقيض الحديث، وهو ما مضى على وجوده زمن طويل، وأصل القديم في اللسان: السابق؛ لأن القديم هو القادم، والقدم: العتق. يقال: قدم الشيء – بالضم – قدما: خلاف حدث، ويقال: شيء قديم: إذا كان زمانه سالفا، وعيب قديم، أي: سابق زمانه متقدم الوقوع على وقته. والجمع: قدماء، وقدامى.

قدم

الكليات : (ص 727) - التعريفات : (ص 172) - العين : (5/122) - معجم مقاييس اللغة : (5/65) - تهذيب اللغة : (9/56) - المحكم والمحيط الأعظم : (6/325) - لسان العرب : (12/465) - تاج العروس : (33/247) - التوقيف على مهمات التعاريف : (ص 269) - معيار العلم في فن المنطق : (ص 285) - التعريفات للجرجاني : (ص 220) - الألفاظ والمصطلحات المتعلقة بتوحيد الربوبية : (ص 373) - مصطلحات في كتب العقائد : (ص 123) - التعريفات الاعتقادية : (ص 285) - المنهاج في شعب الإيمان : (1/188) - الأسماء والصفات للبيهقي : (1/37) - الأسنى في شرح أسماء الله الحسنى وصفاته : (ص 99) - شرح العقيدة الطحاوية : (1/78) - تذكرة المؤتسي شرح عقيدة الحافظ عبدالغني المقدسي : (ص 41) - صفات الله عز وجل الواردة في الكتاب والسنة : (ص 276) - الصفات الإلهية في الكتاب والسنة النبوية في ضوء الإثبات والتنزيه : (ص 175) - مجموع فتاوى ابن تيمية : (3/70) - الصفدية : (2/84) -