إخلاف

English Breaking one's undertakings
اردو وعدہ خلافی
Indonesia Menyelisihi

عَدَمُ وَفَاءِ الشَّخْصِ بِمَا الْتَزَمَهُ وَعَقَدَهُ.

English Non-fulfillment of what a person has promised or undertaken to do.
اردو انسان کا اس شے کو پورا نہ کرنا، جسے اس نے اپنے اوپر لازم کیا ہو اور جس کا معاہدہ کیا ہو۔
Indonesia Tindakan seseorang tidak memenuhi apa yang ia wajibkan pada diri sendiri dan ia sepakati.

الإِخْلاَفُ خُلُقٌ مِنْ أَخْلَاقِ المُنَافِقِينَ ، وَهُوَ تَرْكُ الشَّخْصِ إِنْجَازَ مَا الْتَزَمَ بِهِ مِنْ وَعْدٍ أَوْ عَهدٍ أَوْ شَرْطٍ وَنَحْوِ ذَلِكَ ، وَالمُخْلِفُ لَهُ أَرْبَعُ أَحْوَالٍ فِي إِخْلَافِهِ: الأُولَى: أَنْ يَنْوِي ابْتِدَاءً عَدَمَ الوَفَاءِ وَهَذَا قَدْ جَمَعَ بَيْنَ رَذِيلَةِ الإِخْلَافِ ورَذِيلَةِ الكَذِبِ، وَهُوَ أَشَدُّ أَنْواعُ الإِخْلاَفِ. الثَّانِيَةُ: النَّكْثُ وَالنَّقْضُ لِمَا أَبْرَمَهُ وَالْتَزَمَ بِهِ مِنْ وَعْدٍ أَوْ عَهْدٍ. الثَّالِثَةُ: التَّحَوَّلُ إِلَى مَا هُوَ أَفْضَلُ وَخَيْرٌ عِنْدَ اللهِ ، وَالانْتِقَالُ إِلَى مَا هُوَ أَقْرَبُ إِلَى طَاعَةِ اللهِ وَتَحْقِيقِ مَرْضَاتِهِ. الرَّابِعَةُ: العَجْزُ عَنْ الوَفَاءِ لِسَبَبٍ مِنَ الأَسْبَابِ كَالنِّسْيَانِ وَنَحْوِهِ، فَهُوَ مَعْذورٌ لِعَدَمِ اسْتِطَاعَتِهِ.

English "Ikhlāf" (breaking one's undertakings) is when a person declines to fulfill what he committed himself to through promises, oaths, covenants, conditions, etc. It is one of the characteristics of the hypocrites. The "mukhlif" (one guilty of "ikhlāf") falls into one of the four categories in his "ikhlāf": 1. Intending not to fulfill the promise or covenant from the very beginning. Such a person has combined both vice of lying and vice of "ikhlāf". This is the worst type of "ikhlāf". 2. Breaching or declining to fulfill what he has undertaken or promised to do. 3. Changing his initial promise to something better in Allah's sight, so he instead does something that brings him closer to the pleasure and obedience of Allah. 4. Being unable to fulfill the promise due to some reason, such as forgetfulness or so. Such a person is excused due to his inability.
اردو اِخلاف (وعدہ خلافی اور عہد شکنی) منافقین کی خصلتوں میں سے ایک ہے۔ اِخلاف یہ ہے کہ کوئی شخص اپنے وعدے، عہد ومعاہدے یا شرط وغیرہ کو، جس کا اس نے اپنے آپ کو پابند کر رکھا ہو، پورا نہ کرے۔ ”مُخلِفْ“ (خلاف ورزی کرنے والے) کی وعدہ خلافی کے اعتبار سے چار حالتیں ہوتی ہیں: پہلی حالت: شروع ہی سے اس کی نیت وفا کی نہ رہی ہو، اس میں وعدہ خلافی کی بُرائی کے ساتھ جھوٹ کی رذالت بھی شامل ہوجاتی ہے؛ اس لیے یہ وعدہ خلافی کی بدترین صورت ہے۔ دوسری حالت: عہد وپیمان اور وعدے کو پکاّ کرنے اور اپنے آپ کو اس کا پابند بنانے کے بعد اس سے مُکر جانا اور عہد شکنی کرنا۔ تیسری حالت: اپنے وعدے سے افضل اور اللہ کے نزدیک زیادہ بہتر شے کی طرف پھر جانا۔ یہ اللہ تعالیٰ کی اطاعت گزاری اور اس کی خوش نودی کے حصول کے زیادہ قریب تر ہے۔ چوتھی حالت: کسی سبب وعدہ پورا کرنے سے قاصر رہنا، جیسے بھول چوک وغیرہ سے، ایسا شخص عدمِ استطاعت کی وجہ سے معذور سمجھا جائے گا۔
Indonesia Al-Ikhlāf (melanggar janji) adalah salah satu perangai orang-orang munafik. Yaitu tindakan seseorang yang tidak melakukan apa yang ia sepakati seperti janji, perjanjian, atau syarat dan sebagainya. Orang yang melanggar janji memiliki empat keadaan terkait perbuatannya ini: Pertama: Sejak awal sudah berniat untuk tidak memenuhi (janji). Orang seperti ini telah menghimpun antara keburukan akhlak dan kehinaan dusta. Ini merupakan tindakan menyelisihi janji paling fatal. Kedua: Melanggar dan merusak apa yang sudah ia tetapkan dan wajibkan pada diri sendiri berupa janji atau perjanjian. Ketiga: Beralih kepada yang lebih utama dan baik di sisi Allah, dan berpindahan kepada sesuatu yang lebih dekat dengan ketaatan kepada Allah dan mewujudkan keridaan-Nya. Keempat: Ketidakmampuan memenuhi (janji) karena salah satu sebab, seperti lupa dan sebagainya. Orang seperti ini dimaafkan karena ketidakmampuannya.

عَدَمُ الوَفَاءِ بِالعَهْدِ وَالوَعْدِ وَنَحْوِهِ ، وَيُطْلَقُ الإِخْلاَفُ بِمَعْنَى: الكَذِبِ ، وَضِدُّهُ: الوَفَاءُ وَالصِّدْقُ ، وَيَأْتِي الإِخْلاَفُ بِمَعْنَى: الإِنَابَةُ ، وَالـخِلاَفَةُ: النِّيَابَةُ ، وَأَصْلُ الإِخْلاَفِ: الإِبْدَالُ وَجَعْلُ الشَّيْءِ خَلَفًا عَنِ الشَّيْءِ ، وَالـخَلَفُ: العِوَضُ وَالبَدَلُ ، يُقَالُ: أَخْلَفَ اللهُ عَلَيْكَ خَيْرًا أَيْ أَبْدَلَكَ بِمَا ذَهَبَ مِنْكَ.

English "Ikhlāf": non-fulfillment of promises, pledges, etc. Opposite: "wafā’" (fulfillment, loyalty), "sidq" (truthfulness). "Khilāfah": representation. It is derived from "khalaf", which means compensation and reimbursement. Other meanings: lying, appointing a deputy, swapping, replacing.
اردو عہد وپیمان اور وعدے وغیرہ کو پورا نہ کرنا۔ ’اِخلاف‘ کا اطلاق جھوٹ پر ہوتا ہے۔ اس کی ضد ’وفا شعاری‘ اور ’سچائی‘ ہے۔ ’اِخلاف‘ انابت اور رجوع کے معنی میں آتا ہے۔ ’خلافت‘ نیابت وجانشینی کو کہتے ہیں۔ ’اِخلاف‘ کے اصل معنی بدلنے اور ایک شے کو دوسری شے کا قائم مقام بنانے کے ہیں۔ ’خَلَف‘ بمعنی معاوضہ اور بدل ہے۔ کہاجاتا ہے ’أخْلَفَ اللہُ علیکِ خیراً‘‘ کہ اللہ تمھیں اس چیز کا بہتر بدل عطا فرمائے، جو تم سے چلی گئی۔
Indonesia Tidak memenuhi perjanjian, janji, dan sebagainya. Kata al-ikhlāf juga diungkapkan dengan arti bohong. Lawan katanya adalah al-wafā` (menepati) dan aṣ-ṣidq (jujur). Al-Ikhlāf juga berarti mewakilkan. Al-Khilāfah artinya perwakilan. Makna asal "al-ikhlāf" adalah mengganti dan menjadikan sesuatu sebagai pengganti sesuatu yang lain. Dan kata al-khalaf artinya kompensasi dan ganti. Dikatakan, "akhlafallāhu 'alaika khairan" artinya semoga Allah mengganti apa yang telah hilang darimu dengan yang lebih baik.

يَذْكُرُ الفُقَهَاءُ الإِخْلاَفَ فِي كِتَابِ النِّكَاحِ فِي بَابِ خِطْبَةِ المَرْأَةِ ، وَكِتَابِ البُيُوعِ فِي بَابِ الشُّرُوطِ فِي البَيْعِ ، وَكِتَابِ الجِهَادِ فِي بَابِ أَحْكَامِ الهُدْنَةِ ، وَغَيْرِهَا.

عَدَمُ الوَفَاءِ بِالعَهْدِ وَالوَعْدِ وَنَحْوِهِ ، تَقُولُ: أَخْلَفَ الرَّجُلُ وَعْدَهُ إِذَا لَمْ يَفِ بِهِ وَلم يَصْدُقْ ، وَرَجُلٌ مُخْلِفٌ أَيْ كَثِيرُ الإِخْلافِ لِوَعْدِهِ ، وَيُطْلَقُ الإِخْلاَفُ بِمَعْنَى: الكَذِبِ ، وَضِدُّهُ: الوَفَاءُ وَالصِّدْقُ ، وَيَأْتِي الإِخْلاَفُ بِمَعْنَى: الإِنَابَةُ ، يُقالُ: اسْتَخْلَفَ فُلاَنٌ فُلاَنًا فِي مَالِهِ أَيْ اسْتَنَابَهُ وَأَنَابَهُ مَكَانَهُ وَجَعَلَهُ خَلِيفَةً لَهُ ، وَالـخِلاَفَةُ: النِّيَابَةُ ، وَأَصْلُ الإِخْلاَفِ: الإِبْدَالُ وَجَعْلُ الشَّيْءِ خَلَفًا عَنِ الشَّيْءِ ، وَالـخَلَفُ: العِوَضُ وَالبَدَلُ ، يُقالُ: خَلَفْتُ فُلاَنًا أَيْ جِئْتُ بَعْدَهُ لأَقُومَ مَقَامَهُ وَكُنْتُ بَدَلاً عَنْهُ ، يُقَالُ: أَخْلَفَ اللهُ عَلَيْكَ خَيْرًا أَيْ أَبْدَلَكَ بِمَا ذَهَبَ مِنْكَ.

خلف

معجم المصطلحات والألفاظ الفقهية : 108/1 - معجم لغة الفقهاء : ص30 - القاموس الفقهي : ص121 - الموسوعة الفقهية الكويتية : 325/2 - المحكم والمحيط الأعظم : 5 /200 - لسان العرب : 9 /87 - مختار الصحاح : 1 /95 - لسان العرب : 9 /87 - مختار الصحاح : 1 /95 - الفروق للقرافي : 4 /24 -