أَدِلَّةٌ عَقْلِيَّةٌ

English Intellectual proofs
اردو عقلی دلائل
Indonesia Dalil-dalil rasional

الأَدِلَّةُ التِّي تَثْبُتُ عَنْ طَرِيقِ النَّظَرِ وَالرَّأْيِ وَالاجْتِهَادِ.

English Proofs that are established through speculation, opinion, and personal reasoning.
اردو وہ دلائل جو غور و فکر، رائے اور اجتہاد سے ثابت ہوتے ہیں ۔
Indonesia Dalil-dalil yang ditetapkan lewat pengamatan, pendapat dan ijtihad.

الأَدِلَّةُ الْمُثْبِتَةُ لِلأَحْكَامِ نَوْعَانِ: الأَوَّلُ: الأَدِلَّةُ النَّقْلِيَّةُ: وَهِيَ التِّي طَرِيقُهَا النَّقْلُ، وَتَشْمَلُ الكِتَابَ وَالسُنَّةَ وَالإِجْمَاعَ، وَكَذَلِكَ قَوْلُ الصَّحَابِي وَشَرْعُ مَنْ قَبْلَنَا. الثَّانِي: الأَدِلّةُ العَقْلِيَّةُ، وَتَشْمَلُ القِيَاسَ وَالاسْتِحْسَانَ وَالمَصَالِحَ المُرْسَلَةَ وَالاسْتِصْحَابَ. تَقْسِيمُ الأَدِلَّةِ إِلَى نَقْلِيَّةٍ وَعَقْلِيَّةٍ إِنَّمَا هُوَ بِالنَّظَرِ إِلَى أُصُولِ الأَدِلَّةِ وَذَاتِهَا ، وَأَمَّا بِالنَّظَرِ إِلَى الاسْتِدْلالِ بِهِمَا فَكُلُّ وَاحِدٍ مِنَ القِسْمَيْنِ لَا يَسْتَغْنِي عَنِ الآخَرَ فِي دَلَالَتِهِ عَلَى الحُكْمِ الشَّرْعِي؛ لِأَنَّ الاسْتِدْلَالَ بِالمَنْقولِ لَابُدَّ فِيهِ مِنَ النَّظَرِ وَاسْتِعْمَالِ العَقْلِ الذِي هُوَ أَدَاةُ الفَهْمِ، كَمَا أَنَّ الرَّأْيَ لاَ يُعْتَبَرُ مَشْروعاً سَلِيمًا حَتَّى يَسْتَنِدَ إِلَى النَّقْلِ؛ لِأَنَّ العَقْلَ المُجَرَّدَ لَا مَدْخَلَ لَهُ فِي تَشْرِيعِ الأَحْكَامِ.

English Proofs that establish rulings are of two types: 1."Adillah naqliyyah" (textual proofs): which are conveyed through transmission. These proofs include the Qur’an, the Sunnah, the consensus, the Companions' statements, and the laws of the previous nations. 2. "Adillah ‘aqliyyah" (intellectual proofs): They include analogy, juristic preference, consideration of public interests, and presumption of continuity.
اردو وہ دلائل جن سے احکامِ شریعت ثابت ہوتے ہیں ان کی دو اقسام ہیں: اول: نقلی دلائل۔ اس سے مراد منقول دلائل ہیں ۔کتاب و سنت، اجماع، صحابی کا قول اور سابقہ امتوں کی شریعتیں سب نقلی دلائل میں آتے ہیں۔ دوم: عقلی دلائل، قیاس، استحسان، مصالح مرسلہ اور استصحاب نقلی دلائل میں شامل ہیں۔ نقلی اور عقلی دلائل کی یہ تقسیم ان دلائل کے اصول اور حقیقت کے اعتبار سے ہے۔ البتہ ان دونوں دلائل سے استدلال کے اعتبار سے تو دونوں ہی حکم شرعی پر دلالت کرنے میں ایک دوسرے سے مستغنی نہیں ہوسکتے؛ اس لیے کہ منقول دلائل سے استدلال میں عقل جو کہ سمجھنے کا آلہ ہے اس کا استعمال ناگزیر ہے ، اسی طرح رائے اس وقت تک مشروع اور صحیح سالم نہیں مانی جاسکتی جب تک کہ اس کے لیے کوئی نقلی دلیل بنیاد نہ بنے کیونکہ مجرد عقل کا شرعی احکام کی تشریع میں کوئی عمل دخل ہی نہیں۔
Indonesia Dalil-dalil untuk menetapkan hukum ada dua macam: 1. Dalil-dalil naqli. Yaitu dalil yang diperoleh melalui an-naql (periwayatan), yang meliputi Alquran, Sunah dan Ijmak, demikian juga dengan pendapat sahabat dan syariat sebelum kita. 2. Dalil-dalil akal (rasional), yang meliputi Qiyās, Istiḥsān, Maṣlaḥah Mursalah dan Istiṣḥāb. Pembagian dalil menjadi naqli dan rasional hanya berdasarkan pada dasar-dasar dalil dan zatnya itu sendiri. Adapun jika dilihat dari sudut pandang pengambilan dalil dengan keduanya, maka satu sama lain tidak bisa berdiri sendiri dalam penunjukannya terhadap hukum syariat; karena pengambilan dalil secara naqli harus memakai analisa dan menggunakan akal (rasio) yang merupakan alat untuk memahaminya. Demikian juga halnya dengan pendapat (akal) tidak akan dianggap legal dan lurus sampai disandarkan pada dalil naqli; karena akal saja tidak berfungsi dalam menentukan hukum syariat.

يَرِدُ مُصْطَلَحُ (أَدِلَّةٍ عَقْلِيَّةٍ) فِي بَابِ شُروطِ التَّكْلِيفِ ، وَبَابِ القِيَاسِ ، وَبَابِ التَّعَارُضِ وَالتَّرْجِيحِ.

البحر المحيط في أصول الفقه : (36/1) - الشامل في حدود وتعريفات مصطلحات علم الأصول : (130/1) - الإحكام : 130/1 - الوجيز في أصول الفقه : (ص149) - الموافقات : (30/1) -