تروية

English Quenching thirst
اردو پینے اور استعمال کے لیے پانی کا توشہ رکھ لینا
Indonesia Tarwiyah

التَّزَوَّدُ مِنَ المَاءِ وَحَمْلَهُ لِاسْتِعْمَالِهِ فِي شُرْبٍ أَوْ سَقْيٍ وَنَحْوِهِ.

English Taking water as provision and carrying it in order to use it for drinking, watering, and the like.
اردو پانی بھرنا اور اسے اٹھا کر لانا تاکہ اسے پینے اور سیراب کرنے اور اس طرح کے دیگر امور میں استعمال کیا جاسکے۔
Indonesia Mengambil bekal air dan membawanya untuk di minum, atau menyiram dan semacamnya.

مُصْطَلَحُ التَّرْوِيَةِ يُطْلَقُ مُضَافًا إِلَى اليَوْمِ وَيُرادُ بِهِ: هُوَ يَوْمُ الثَّامِنِ مِنْ ذِي الـحـِجَّةِ ، وَيَنْطَلِقُ فِيهِ الـحـُجَّاجُ إِلَى مِنًى ، وَهُوَ اليَوْمُ الثَّامِنُ مِنْ ذِي الحِجَّةِ ، وسُمِّي بِذَلِكَ لِأَحَدِ سَبَبَيْنِ: 1- لِأَنَّ النَّاسَ يَتَزوَّدُونَ فِيهِ مِنَ الـمَاءِ وَيَرْوُونَ إِبِلَهُمْ وَنَحْوَهَا ، وَيَأْخُذُونَهُ فِي الأَوْعِيَةِ وَالأسْقِيَةِ ذَلِكَ اليَوْمَ ، اسْتِعْداداً لِلذَّهَابِ إِلى عَرَفَةَ ، ولَمْ يَكُنْ بِعَرَفَةَ مَاءٌ . 2- لِأَنَّ الْحَاجَّ يَنْظُرُونَ فِي أَمْرِ الْحَجِّ وَيَأْخُذُونَ الأُهْبَةَ ذَلِكَ الْيَوْمِ وَيَسْتَعِدُّونَ لَهُ. وَقِيلَ: سُمِّيَ بِذَلِكَ؛ لِأَنَّ إبْرَاهِيمَ - عَلَيْهِ السَّلَامُ - رَأَى لَيْلَتَهُ فِي الْمَنَامِ ذَبْحَ ابْنِهِ ، فَأَصْبَحَ يَرْوِي فِي نَفْسِهِ أَهُوَ حُلْمٌ أَمْ مِنْ اللَّهِ تَعَالَى ؟ فَسُمِّيَ يَوْمَ التَّرْوِيَةِ.

English “At-Tarwiyah” (quenching thirst) is a term commonly used jointly with the word ‘day’. Together, they refer to the eighth day of Dhul-Hijjah. Pilgrims, on this day, move towards Mina. It was named the Day of “Tarwiyah” for two reasons: 1. Because people drink, water their camels and animals, and bring water along with them before heading towards ‘Arafah, since there used to be no water in ‘Arafah at that time. 2. Because the pilgrims would ponder about their pilgrimage and mentally prepare for it during this time. It is said that Prophet Ibrāhim (Abraham), peace be upon him, saw himself slaughtering his son in a dream during this night. He then began to wonder whether it was merely a dream or it was a revelation from Allah, hence they named it the day of “At-tarwiyah”.
اردو ’تَرْوِيَة‘ کی اصطلاح کا اطلاق ’الیوم‘ کی طرف اضافت کے ساتھ ہوتا ہے اور اس یوم سے مراد ذو الحجہ کا آٹھواں دن ہے۔ اس دن حجاج کرام منی کی طرف جاتے ہیں۔ یہ ذو الحجہ کا آٹھواں دن ہوتا ہے اور اسے یہ نام دو اسباب کی وجہ سے دیا گیا ہے: 1- کیونکہ اس دن لوگ پانی بھر کر اپنے اونٹوں وغیرہ کو پلاتے ہیں اور اسے برتنوں اور مشکیزوں میں بھر لیتے ہیں تاکہ وہ عرفہ کی طرف جانے کے لئے تیار ہوجائیں۔ عرفہ کے میدان میں پانی نہیں ہوتا۔ 2- کیونکہ اس دن حاجی لوگ حج کے معاملے میں غور وفکر کرتے ہیں اور اس دن کے لئے تیاری کرتے ہیں۔ ایک قول یہ بھی ہے اسے یہ نام اس لئے دیا گیا کیونکہ ابراہیم علیہ السلام نے اس دن کی رات کو خواب میں دیکھا کہ وہ اپنے بیٹے کو ذبح کررہے ہیں۔ جب صبح اٹھے تو وہ اس بات میں غور و فکر کر رہے تھے کہ آیا یہ خواب ہے یا پھر اللہ تعالی کی طرف سے حکم؟ اسی وجہ سے اس دن کا نام ’يَوْمُ التَّرْوِيَةِ‘ (غور و فکر کرنے کا دن) پڑ گیا۔
Indonesia Istilah "at-tarwiyah" diungkapkan dengan disandarkan pada hari, dan maksudnya adalah hari ke-8 dari bulan Zulhijah. Di hari ini jamaah haji bergerak menuju Mina. Ini hari ke-8 bulan Zuhijah. Dinamakan "hari tarwiyah" karena salah satu dari dua sebab: 1. Sebab di hari ini, orang-orang mengambil bekal air, mengenyangkan unta mereka dan binatang semacamnya dengan air, dan mereka memasukkan air ke dalam bejana dan wadah-wadah air pada hari itu sebagai bentuk persiapan pergi ke Arafah, mengingat tak ada sumber air di Arafah. 2. Karena orang yang menunaikan ibadah haji memperhatikan perintah haji, mempersiapkan diri di hari itu dan bersiap-siap menunaikan haji. Ada pula yang mengatakan, dinamakan "hari tarwiyah" karena Nabi Ibrahim -'alaihi as-salām- di malam itu bermimpi menyembelih putranya. Maka di pagi harinya beliau berbicara (yarwī) di dalam batin, apakah itu sekedar mimpi atau perintah dari Allah -Ta'ālā-? Karena itulah dinamakan hari "Tarwiyah".

التَّزَوُّدُ بِالـمَاءِ وَالإِتْيَانُ بِهِ ، وَأَصْلُ التَّرْوِيَةِ مِنَ الرَّيِّ وَهُوَ الشَّبَعُ مِنَ المَاءِ ، وَضِدُّهُ العَطَشُ ، وَقِيلَ أَصْلُ التَّرْوِيَةِ مِنَ التَّرْوِئَةِ أَوْ التَّرَوِّي وَهُوَ التَّفَكُّرُ ، يُقَالُ: رَوَّأَ يُرَوِّئُ تَرْوِئَةً، أَيْ تَفَكَّرَ فِي الْأَمْرِ وَنَظَرَ فِيهِ.

English “At-Tarwiyah”: taking water as a provision. It is derived from the word “rayy”, which means to be full from drinking water. Opposite: “‘Atash” (thirst). Other meaning: to ponder.
اردو تروية کا لغوی معی ہے پانی بھرنا اور لے کر آنا۔ یہ لفظ دراصل ’ریّ‘ سے ماخوذ ہے جس کا معنی ہے: پانی سے سیراب ہونا۔ اس کی ضد ’عطش‘ ہے۔ ایک قول کی رو سے 'تروية‘ کا لفظ دراصل ’تروئة‘ یا ’تروى‘ سے ماخوذ ہے جس کا معنی ہے: غور وفکر کرنا۔ کہا جاتا ہے: ”رَوَّأَ يُرَوِّئُ تَرْوِئَةً“ یعنی اس نے معاملے میں غور و فکر کیا۔
Indonesia At-Tarwiyah artinya mengambil bekal air dan membawanya. Asal kata at-tarwiyah dari kata "ar-ray" yaitu kenyang karena air. Lawan katanya adalah al-'aṭasy (dahaga). Ada yang mengatakan, at-tarwiyah berasal dari kata "at-tarwi`ah" atau "at-tarawwī" yang berarti berfikir. Dikatakan, "Rawwa`a yurawwi`u tarwi`atan" yaitu memikirkan dan memperhatikan suatu perkara.

يُطْلَقُ مُصْطَلَحُ (التَّرْوِيَةِ) فِي كِتَابِ الطَّهَارَةِ فِي بَابِ صِفَةِ الغُسْلِ وَيُرادُ بِهِ: إِيصَالُ المَاءِ الكَثِيرِ إِلَى أُصُولِ الشَّعْرِ. وَيُطْلَقُ أَيْضًا فِي كِتَابِ الحَجِّ وَالصِّيَامِ وَالأَضَاحِي وَغَيْرِهَا مُضَافًا إِلَى اليَوْمِ فَيُقَالُ: (يَوْمُ التَّرْوِيَةِ) ، وَيُرادُ بِهِ: اليَوْمُ الثَّامِنِ مِنْ شَهْرِ ذِي الـحِجَّةِ . وَقَدْ يُطْلَقُ مُصْطَلَحُ (التَّرْوِيَةِ) - أَحْيَانًا - مُفْرَدًا بِدُونِ إِضَافَةٍ وَيُرادُ بِهِ: اليَوْمُ الثَّامِنِ مِنْ شَهْرِ ذِي الـحِجَّةِ.

التَّزَوُّدُ بِالـمَاءِ لِلشُّرْبِ وَنَحْوِهِ ، تَقُولُ: تَرَوَّى مِنَ المَاءِ إِذَا تَزَوَّدَ مِنْهُ وَحَمَلَهُ مَعَهُ ، وَيُطْلَقُ أَيْضًا عَلَى الإِتْيَانِ بِالمَاءِ ، وَرَوَّيْتُ أَصْحَابِي إذَا أَتَيْتَهُمْ بِالْمَاءِ ، وَأَصْلُ التَّرْوِيَةِ مِنَ الرَّيِّ وَهُوَ الشَّبَعُ مِنَ المَاءِ ، وَضِدُّهُ العَطَشُ ، يُقَالُ: رَوِيَ مِنْ الـمَاءِ يَرْوَى رَيًّا أَيْ شَرِبَ حَتَّى شَبِعَ ، والرَيَّانُ: ضدُّ العَطْشَانِ ، وَالرَّاوِيَةُ: البَعِيرُ وَنَحْوُهُ يُحْمَلُ عَلَيْهِ المَاءُ ، وَالإِرْوَاءُ وَالتَّرَوِّي أَيْضًا: السَّقْيُ ، وَقِيلَ أَصْلُ التَّرْوِيَةِ مِنَ التَّرْوِئَةِ أَوْ التَّرَوِّي ، وَهُوَ التَّفَكُّرُ ، يُقَالُ: رَوَّأَ يُرَوِّئُ تَرْوِئَةً بِالْهَمْزَةِ، أَيْ تَفَكَّرَ فِي الْأَمْرِ وَنَظَرَ فِيهِ.

روي

الصحاح : 6 /2365 - المحكم والمحيط الأعظم : 10 /352 - المعجم الوسيط : ص384 - المحكم والمحيط الأعظم : 10 /352 - شرح الزركشي : 1 /322 - طلبة الطلبة في الاصطلاحات الفقهية : 83 - شمس العلوم : 4 /2690 - المصباح المنير : 1 /246 - بدائع الصنائع : 2/151 - الـمغني لابن قدامة : 3/363 -