تَراضٍ

اردو رضامندی، طرفین کی باہمی رضامندی۔
Indonesia Saling Merelakan

اتِّفاقُ العاقِدَيْنِ على إِنْشاءِ عَقْدِ البَيْعِ بِإِرادَةٍ واخْتِيارٍ، دونَ إكْراهٍ أو نَحوِهِ.

اردو لین دین میں فریقین کا اپنے ارادہ اور اختیار سے کسی کو مجبور کیے اور دھمکی وغیرہ دیئے بغیر معاملہ طے ہونے پر اتفاق کرنا۔
Indonesia At-Tarāḍī artinya saling rida antara dua pihak. Keridaan adalah keinginan berbuat atau berbicara disertai kenyamanan dalam melakukannya.

التَّراضِي: شرطٌ في عقد البيع، إذ يُشتَرَطُ وُجودُ إِرادَتْيْنِ مِن البائِعِ والمُشْتَرِي عند العَقْدِ، ويدُلُّ على التَّراضِي أشْياءٌ مِنْها: القَوْلُ بالإيجابِ والقَبُولِ، أو القَوْلُ مِن أحدِهما، والفِعلُ مِن الطَّرَفِ الآخَرِ، ومِنها: الفِعْلُ مِنَ الجانِبَينِ كما في المُعاطَاةِ، ومِنها: الكِتابَةُ والإشارَةُ.

اردو تراضی یعنی فریقین کی باہمی رضامندی یہ خرید وفروخت کی شروط میں سے ہے، اس لیے کہ بیع میں بائع اور مشتری دونوں کے ارادے اور رضامندی کا ہونا شرط ہے۔ ان کی باہمی رضامندی پر بہت سی چیزیں دلالت کرتیں ہیں، ان میں سے ایک ایجاب و قبول کرنا یا کوئی ایک بات کرے اور دوسرا شخص رضامندی پر دلالت کرنے والا کام انجام دے۔ کبھی جانبین کا عمل، دونوں کی رضامندی پر دلالت کرتا ہے جیسے بیعِ معاطاۃ میں ہوتا ہے۔ اسی طرح لکھنا اور اشارہ کرنا بھی طرفین کی رضامندی پر دلالت کرتا ہے۔

تَبادُلُ الرِّضا مِنْ طَرَفَيْنِ، والرِّضا: الرَّغْبَةُ في الفِعْل أو القَوْلِ والاِرْتِياحُ إِلَيْهِ.

اردو تراضی کا معنی ہے طرفین کا باہمی رضامندی کا اظہار۔ الرضا: کہتے ہیں قول و فعل میں رغبت رکھنا اور اس سے اطمئنان کا اظہار کرنا۔

يُطْلَقُ مُصْطَلَحُ (تَراضِي) في الفِقْهِ في أَبْوابٍ عدَّةٍ، مِنْها: كِتاب البُيوع، باب: الإِقالَة، ويُرادُ به: اتِّفاقُ البائِعِ والمُشْتَرِي على فَسْخِ العَقْدِ. ويُطلَقُ في كِتابِ النِّكاحِ، باب: شُروط النِّكاحِ، وباب: الخُلْع، وباب: الصُّلْح، ويُرادُ به: مُوافَقَة الزَّوْجَيْنِ على مِقْدارِ الصَّداقِ بعد العَقْدِ، أو الزِّيادَةِ أو النُّقْصانِ فِيهِ. ويُطلَقُ في كِتاب النِّكاح، باب: الرَّضاع، ويُراد بِه: اتِّفاق الأبَوَيْنِ على فِطامِ المَوْلودِ لِأقَلَّ مِن سَنَتَين. وفي كِتابِ القَضاءِ، ويُرادُ بِهِ: اتِّفاق المُتَخاصِمِينَ والحَكَمِ على قَبولِ مُهِمَّةِ التَّحْكِيمِ.

تَبادُلُ الرِّضا مِنْ طَرَفَيْنِ، والتَّفاعُل يَدلُّ على الاِشْتِراكِ. والرِّضا: هو الرَّغْبَةُ في الفِعْل أو القَوْلِ والاِرْتِياحُ إلَيْهِ، وهو ضِدُّ الإِكْراهِ والإِجْبارِ، ويُطْلَقُ بِمعنى الاِخْتِيارِ والقبولِ، يُقالُ: تَراضَى الشَّخْصانِ، أيْ: قَبِلَ ورَغِبَ كُلُّ واحِدٍ مِنْهُما.

رضي

معجم مقاييس اللغة : (2/402) - الصحاح : (6/2357) - لسان العرب : (14/323) - معجم لغة الفقهاء : (ص 223) - الموسوعة الفقهية الكويتية : (11/156) - معجم المصطلحات والألفاظ الفقهية : (2/150) - الموسوعة الفقهية الكويتية : (11/159) -