إِجْماعٌ

English Consensus
اردو اجماع
Indonesia Ijmak, konsensus

اتِّفاقُ الـمُجْتَهِدِينِ مِنْ أُمَّةِ مُحَمَّدٍ صلَّى اللهُ عليه وسلَّم بَعْدَ زَمانِهِ في عَصْرٍ مِن العُصورِ على حُكْمٍ شَرْعِيٍّ.

English An agreement of all the mujtahids (senior Muslim scholars) from the community of Muhammad, may Allah's peace and blessings be upon him, in a certain era after his death on a particular Islamic ruling.
اردو محمد ﷺ کی امت کے تمام مجتہدین کا آپﷺ کے دور کے بعد کسی بھی دور میں کسی شرعی حکم پر اتفاق کرلینا۔
Indonesia Kesepakatan para mujtahid dari umat Muhamad -ṣallallāhu ‘alaihi wa sallam- setelah zaman beliau dalam suatu masa terkait sebuah hukum syariat.

الإِجْماعُ في اصْطِلاحِ الأُصولِيِّين: هو اتِّفاقُ جَمِيعِ الـمُجْتَهِدِينَ من الـمُسلِمِين في عَصْرٍ من العُصورِ بعد وَفاةِ الرَّسولِ صلَّى اللهُ عليه وسلَّم على حُكْمٍ شَرْعِيٍّ في واقِعَةٍ ما، وعُدَّ إِجْماعُهُم على حُكْمٍ واحِدٍ فيها دَلِيلاً على أنّ هذا الحُكْمَ هو الحُكْمُ الشَّرْعِيُّ في الواقِعَةِ، وإنّما قِيلَ في التَّعْرِيفِ: "بعد زَمانِ النَّبِيِّ صلى الله عليه وسلم ووَفاتِهِ"؛ لأنّه في حَياةِ الرَّسولِ صلَّى اللهُ عليه وسلَّم يُعَدُّ هو الـمَرْجِعُ التَّشْرِيْعِيُّ وَحْدَهُ، فلا يُتَصَوَّرُ اخْتِلافٌ في حُكْمٍ شَرْعِيٍّ ولا اتِّفاقٌ؛ إِذ الاتِّفاقُ لا يَتَحَقَّقُ إلاّ مِنْ عَدَدٍ.

English "Ijmā‘" (consensus) in the terminology of the scholars of "usool al-Fiqh" (the fundamentals of Islamic Jurisprudence) refers to the agreement of all the mujtahids from the Muslims in a certain era after the death of the Messenger of Allah, may Allah's peace and blessings be upon him, on a particular Islamic ruling that pertains to a certain situation. Such consensus then becomes legal proof that this is the correct Islamic ruling on this situation. The definition states that "ijmā‘" only starts after the death of the Prophet, may Allah's peace and blessings be upon him, because during his lifetime he was the only legal authority, and therefore neither consensus nor difference of opinion on a legal ruling would have been possible because a number of legal authorities are needed for a consensus, and agreement can not be achieved but through a number of people.
اردو علماء اصول کی اصطلاح میں اجماع كا معنی ہے: آپﷺ کی وفات کے بعد کسی دور میں مسلمانوں کے تمام مجتہدین کا کسی مخصوص واقعہ میں کسی حکم شرعی پر اتفاق کر لینا۔ ان کا کسی ایک حکم پر ’اجماع‘ اس بات پر دلیل ہوگا کہ یہ حکم اس واقعہ میں حکم شرعی کی حیثیت رکھتا ہے۔ اجماع کی تعریف میں ”آپﷺ کے بعد کے زمانے اور آپﷺ کی وفات“ کی قید اس لئے لگائی گئی ہے کیونکہ آپﷺ کی حیات میں صرف اور صرف آپﷺ قانونی مرجع کی حیثیت رکھتے تھے، چنانچہ آپﷺ کے دور میں کسی حکم شرعی پر اختلاف یا اتفاق کا کوئی تصور ہی ممکن نہیں کیونکہ اتفاق تو اسی وقت ہوتا ہے جب ایک سے زیادہ افراد ہوں۔
Indonesia Al-Ijmā' dalam istilah ulama Usul Fikih adalah kesepakatan seluruh mujtahid kaum muslimin di satu masa setelah wafat Rasulullah -ṣallallāhu ‘alaihi wa sallam- terkait sebuah hukum syar'i dalam satu peristiwa tertentu. Dan ijmak mereka terkait sebuah hukum dianggap sebagai dalil bahwa hukum ini adalah hukum syariat dalam kasus itu. Dalam definisi disebutkan "setelah zaman Nabi -ṣallallāhu ‘alaihi wa sallam-" karena di masa kehidupan Rasulullah -ṣallallāhu ‘alaihi wa sallam- beliau dianggap sebagai satu-satunya referensi pensyariatan hukum, sehingga tidak mungkin ada perbedaan pendapat dalam suatu hukum syar'i, dan tidak pula kesepakatan; mengingat kesepakatan itu tidak terwujud kecuali dari sejumlah orang.

الاتِّفاقُ، يُقالُ: أَجْمَعَ القَوْمُ على أمْرٍ ما، أي: اتَّفَقُوا عليه، واجْتَمَعَت آراؤُهُم عليه.

English "Ijmā‘": agreement of a group of people on an issue.
اردو اجماع کا معنی ہے اتفاق، اسی سے کہا جاتا ہے: ”أَجْمَعَ القَوْمُ على أمْرٍ ما“ کہ پوری قوم ایک بات پر متفق ہو گئی اورسبھی کی رائے اسی بات پر متحد ہو گئی ہے۔
Indonesia Kesepakatan. Dikatakan, "Ajma'a al-qaumu 'alā amrin mā" artinya orang-orang itu menyepakati suatu perkara dan pendapat mereka sama-sama menyetujuinya.

يَرِدُ مُصطلح (إِجْماع) في مواطنَ عَدِيدَةٍ مِن كُتُبِ الفِقْهِ وأَبْوابِهِ، بِحَيْثُ يَعْسُرُ حَصْرُها؛ إِذْ قَلَّ بابٌ مِنْها إلاّ وفِيهِ ذِكْرُ هذا الـمُصْطَلَحِ.

مَصْدَرُ أَجْمَعَ، ومعناه: الاتِّفاقُ، يُقالُ: أَجْمَعَ القَوْمُ على أمْرٍ ما، أي: اتَّفَقُوا عليه، واجتَمَعَت آراؤُهم عليه، ويأتي بِمعنى الإِعْدادِ، يُقال: أَجْمَعْتُ كَذا، أي: أَعْدَدْتُهُ، ومِن معانيه أيضاً: العَزِيْمَةُ على الأَمْرِ، وجَعْلُ الـمُتَفَرِّقِ جميعاً.

جمع

تهذيب اللغة : (1/253) - المحيط في اللغة : (1/272) - النهاية في غريب الحديث والأثر : (1/10) - التقرير والتحبير : (3/106) - قواطع الأدلة : (1/461) - شرح مختصر الروضة : (3/5) - الفقيه و المتفقه : (1/225) - الإحكام : (1/254) - علم أصول الفقه : (ص 45) - لسان العرب : (8/58) - تاج العروس : (20/463) - علم أصول الفقه : (ص 45) -