التصنيف: أخرى .

اِسْتِنْكاحٌ

English Prevalent doubt
اردو عبادتوں میں بکثرت شک کا آنا
Indonesia Keraguan yang dominan

غَلَبَةُ الشَّكِّ وكثْرَةُ دُخُولِهِ على الإنْسانِ في عِبادَتِهِ.

English Prevalence of doubt and its frequent influence on a person while performing acts of worship.
اردو عبادت میں انسان پر شک کا غلبہ ہوجانا اور بکثرت شک میں پڑنا۔
Indonesia Perasaan ragu yang dominan dan sering menimpa seseorang dalam ibadahnya.

اختصَّ فُقهاءُ المالكيةِ دون غيرهم بالتَّعبير عن غَلَبةِ الشَّكِّ بالاستِنكاحِ، وذكروا أنّ استِنكاحَ الشَّكِّ للإنسان من المِحَنِ والبَلايا، ودواؤُه الالتهاءُ عنه، وضابِطُه عندهم: أن يَكْثُرَ فَيَطْرَأَ عليه في كلِّ وُضوءٍ، أو في كلِّ صلاةٍ، أو في اليوم مرَّتَين أو مرَّة، وأما لو كان لا يحصل له إلّا بعد يومٍ أو يَومَين فليس باسْتِنكاحٍ، وعبَّر بَقِيةُ الفُقهاءِ عنه بِغَلبة الشَّكِّ وكثرتِه، أو بالوَسْوَسَةِ.

English The scholars of the Maaliki school of Fiqh were the only ones who used the term "istinkaah" (prevalent doubt) to refer to the prevalence of doubt. They mentioned that frequent doubt (regarding the sound performance of the acts of worship) is among the afflictions and trials that befall a person and that its cure is to ignore it. The criterion in deciding whether prevalent doubt amounts to "istinkaah" or not in their school is that it occurs quite often, occurs every time a person makes ablution, in every prayer, or once or twice a day. However, if the person experiences such doubt every other day or every two days, then it is not called "istinkaah". The rest of the scholars - other than the Maalikis - referred to this condition as prevalent or frequent doubt.
اردو غلبۂ شک کے لیے ”استنکاح“ کی تعبیر فقہاء میں سے صرف مالکیہ کے ہاں رائج ہے۔ ان کا کہنا ہے کہ آدمی کو شک لاحق ہونا ایک قسم کی مصیبت و آزمائش ہے جس کی دواء یہ ہے کہ اسے جھٹک دیا جائے (یعنی اس پر توجہ کرنی ہی چھوڑ دی جائے)۔ استنکاح کی تعبیر کے استعمال کے لیے ان کے ہاں یہ اصول ہے کہ شک بکثرت پایا جائے، بایں طور کہ ہر وضوء، یا ہر نماز میں یا پھر دن میں دو یا ایک مرتبہ شک لاحق ہونے لگے۔ اگر شک ایک یا دو دن کے وفقے کے بعد ہوتا ہو تو پھر اس پر ’استنکاح‘ کے لفظ کا اطلاق نہیں ہوگا۔ جب کہ دیگر فقہاء اس کیفیت کو غلبۂ شک اور کثرتِ شک کے ساتھ تعبیر کرتے ہیں۔
Indonesia Para ulama fikih mazhab Malikiyah secara khusus, tidak selain mereka, mengungkapkan kondisi dominannya keraguan dengan istilah al-istinkāḥ. Mereka menyebutkan bahwa istinkāḥ atau dominannya keraguan pada diri seseorang termasuk cobaan dan ujian, dan solusinya adalah tidak mengacuhkannya. Acuannya menurut mereka, adalah keraguan ini kerap terjadi sehingga muncul di setiap wudu, di setiap salat, atau dalam sehari terjadi dua atau satu kali. Adapun bila keraguan yang dominan ini tidak terjadi kecuali setelah satu atau dua hari, maka tidak disebut al-istinkāḥ. Sedangkan para ulama fikih lainnya menyebut kasus ini dengan ungkapan "keraguan yang dominan atau sering" atau "waswas".

الاسْتِنكاحُ: الغَلَبَةُ والاخْتِلاطُ، يُقال: اسْتَنْكَحَ النَّوْمُ عُيُونَهُم، أيْ: غَلَبَهُم النُّعاسُ.

English "Istinkaah": prevalence and intermixing.
اردو اِسْتِنْکاح: غلبہ پانا اور گھل مل جانا۔ کہا جاتا ہے: ”اسْتَنْكَحَ النَّوْمُ عُيُوْنَهُمْ“ یعنی نیند ان کی آنکھوں پر غالب آ گئی، یعنی اونگھ آگئی۔
Indonesia Al-Istinkāḥ artinya menang dan bercampur. Dikatakan, "Istankaḥa an-naumu 'uyūnahum", artinya kantuk mengalahkan mata mereka.

يَرِد مُصْطَلَح (اسْتِنْكاح) أو (الشَّكّ الغالِب) في كثِير من مَسائِل الفقه، كالوُضُوءِ، والغُسْلِ، والتَّيَمُّمِ، وإِزالَةِ النَّجاسَةِ، وكِتاب الصَّلاةِ، والطَّلاقِ، والعَتاقِ، وغَيْرِ ذلك.

الاسْتِنكاحُ: الغَلَبَةُ والاخْتِلاطُ، مَصْدَرُ اسْتَنْكَحَ، يَسْتَنْكِحُ، بِمَعْنَى نَكَحَ، يُقال: تَناكَحَ القَوْمُ، واسْتَنْكَحَ النَّوْمُ عُيُونَهُم، أيْ: غَلَبَهُم النُّعاسُ، ونَكَحَ المَطَرُ الأرضَ: إذا اختَلَطَ في تُرابِها.

نكح

العين : (ص 63) - معجم مقاييس اللغة : (5/475) - المحكم والمحيط الأعظم : (3/47) - الصحاح : (1/413) - القاموس المحيط : (ص 246) - النوادر والزيادات على ما في المدَوَّنة من غيرها من الأُمهاتِ : (1/21) - مواهب الجليل في شرح مختصر خليل : (1/143) - المعونة على مذهب عالم المدينة «الإمام مالك بن أنس» : (1/152) - الموسوعة الفقهية الكويتية : (4/129) -