أفق

English Horizon
اردو کنارہ
Indonesia Ufuk, cakrawala
Bosanski Svemirsko prostranstvo
Русский Горизонт

نواحي الأرض وما فيها من حوادث ومخلوقات، وأقطار السموات وما فيها من عجائب وآيات.

English The sides of the earth with what they contain of occurrences and creatures; and the zones of the heavens and what they contain of marvels and signs.
اردو زمین کے کنارے اور اس میں جو کچھ حوادث (نئی چیزیں) اور مخلوقات ہیں، نیز آسمان کے کنارے اور ان میں موجود انوکھی چیزیں اور نشانیاں۔ ’اُفق اعلی‘ اہلِ تصوف کے خاص اصطلاحات میں سے ہے، انہوں نے اس کا ایک فاسد معنی ایجاد کر رکھا ہے، اور وہ : روح کی انتہا کو پہنچنا اور الٰہ (معبود) کے مظہر اور اس کی صفات میں ظاہر ہونا ہے۔ جب مخلوق اس درجہ تک پہنچ جائے تو وہ تمام مخلوق پر فائق ہوجاتی ہے اور اس کے اندر مُردے کو زندہ کرنے وغیرہ جیسی الٰہی صفات پیدا ہوجاتی ہیں۔ صوفیا ’افق اعلی‘ اور ’افق مبین‘ کے مابین فرق کرتے ہیں، چنانچہ ان کے ہاں ’افق مبین‘ سےمراد مقامِ قلب کی انتہا ہے۔ جب کہ اہلِ سنت افق اعلی اور افق مبین کے مابین کوئی فرق نہیں کرتے، یہ دونوں طلوع شمس کے کنارے کے نام ہیں، اور یہ دونوں جبریل علیہ السلام کے نبی ﷺ سے (اپنی حقیقی شکل و صورت میں) ملاقات کے موقع و محل کے دو وصف ہیں اور وہ دونوں بلندی اور وضوح سے عبارت ہیں۔ افق اعلی: مشرق کی سمت میں زمین سے بعید ترین جگہ ہے۔ اس کا افق مبین بھی نام ہے، یہ وہی جگہ ہے جہاں جبریل علیہ السلام اس وقت نمودار ہوئے تھے جب نبی ﷺ نے ان کو دیکھا تھا، یہ اس وقت کی بات ہے جب آپ ﷺ نے جبریل علیہ السلام سے مطالبہ کیا تھا کہ آپ انہیں ان کی اس شکل میں دیکھنا چاہتے ہیں جس پر اللہ تعالی نے انہیں پیدا فرمایا ہے، تو انہوں نے اپنے آپ کو دو بار دکھایا؛ ایک بار زمین پر جب آپ ﷺ غارِ حرا میں تھے، تو جبریل علیہ السلام مشرق سے نمودار ہوئے اور انہوں نے مشرق سے مغرب تک کی وسعت کو گھیر لیا، اور دوسری بار آسمان میں سدرۃ المنتہی کے پاس دیکھا۔ ’افق اعلی‘ کی اصطلاح کا ذکر عقیدہ میں توحیدِ اسماء وصفات کے باب میں رؤیتِ باری تعالی کے مسئلہ میں بات کرتے وقت آتا ہے۔
Indonesia Sisi-sisi bumi berikut kejadian dan makhluk-makhluk yang ada di dalamnya, serta sisi-sisi langit berikut keajaiban dan tanda-tanda besar yang ada di dalamnya.
Bosanski Strane (krajevi) Zemlje i ono što se na njima nalazi, te nebeske sfere i ono što je u njima. "El-ufukul-a'la" (najviše obzorje) jest izraz koji je svojstven sufijama. Oni su mu dali pogrešno i neispravno značenje, a to je: dostizanje krajnjih stepena duše i njeno pojavljivanje u božanskom liku i sa božanskim svojstvima, i kada stvorenje dostigne ovaj stepen uzdigne se iznad ostalih stvorenja i pojavi se sa svojstvima stvoritelja kao što je oživljavanje mrtvih i slično tome. Sufije prave razliku između pojmova "el-ufukul-a'la" (najviše obzorje) i "el-ufukul-mubin" (jasno obzorje), jer je "el-ufukul-mubin", prema njima, krajnji stepen srca. Ehli-sunnet ne pravi razliku između ova dva pojma. To je, po sljedbenicima ehli-sunneta, mjesto izlaska sunca, i opis mjesta na kome se Džibril, alejhis-selam, ukazao Poslaniku, sallallahu alejhi ve sellem, a znači: uzvišenost i jasnoća. "El-ufukul-a'la" je naudaljenije mjesto na Zemlji sa istočne strane; naziva se i "el-ufukul-mubin", a to je mjesto na kojem se pojavio Džibril, alejhis-selam, kada ga je Poslanik, sallallahu alejhi ve sellem, vidio nakon što je tražio od njega da mu se pokaže u njegovom stvarnom liku u kojem ga je Allah stvorio. Pokazao mu se dva puta: jednom na Zemlji, kad je Poslanik, sallallahu alejhi ve sellem, bio u pećini Hira, pa je Džibril izašao sa istočne strane i zaklonio čitavu istočnu stranu do zapada, i jednom na nebesima, kod Sidretul-muntehaa. Izraz "el-ufukul-a'la" spominje se u pitanjima o vjerovanju.
Русский Пределы земли со всеми творениями, которые есть на ней, а также пределы небес со знамениями и чудесами, которые в них.

الأفق: هو أعلى ما يلوح للبصر، أو ما انتهى إليه البصر من السماء مع وجه الأرض من جميع النواحي: شرقا وغربا، شمالا وجنوبا، وقد بين الله تعالى من غرائب صنعه، وعجائب خلقه في نواحي سمواته وأرضه، من الشمس، والقمر، والنجوم، والأشجار، والجبال، والدواب، والبحار، وغير ذلك؛ ما يتبين به لكل عاقل أنه هو الرب المعبود وحده لا شريك له. والنظر في آيات الله كخلق الكون وإبداعه وفق نظام محكم دقيق مما يعرف بدلالة الآفاق، وهي آية من آيات الله العظيمة الدالة على ربوبيته سبحانه وتوحيده، وأن القرآن حق من عند الله تعالى.

English "Ufuq" (horizon) is the farthest extent that one can see, or the line at which the earth's surface and the sky appear to meet from all directions: East, West, North, and South. Allah, the Exalted, has clarified for every rational person that He is the Lord and the One Who deserves to be worshiped alone, without any partners, through His amazing and wonderful creations within His heavens and earth, like the sun, the moon, the stars, the trees, the mountains, the animals, the oceans, and all other creations. Pondering over Allah's signs, such as the creation of the universe with an organized and precise system, is known as "dalālat al-āfāq" (indications of the horizons). It is one of the great signs of Allah that indicate His lordship and His oneness, and that the Qur’an is the truth from Allah, the Exalted.
اردو ’أُفُق‘: مشرق و مغرب، شمال اور جنوب سبھی اطراف سے روئے زمین کے ساتھ (ملا ہوا محسوس ہونے والا)آسمان کا وہ اعلی حصہ جو نگاہ کے سامنے ظاہر ہوتا ہے یا جہاں تک نگاہ پہنچتی ہے۔ اللہ تعالیٰ نے آسمان و زمین کے اطراف میں اپنی کاریگری اور اپنی تخلیق کے سورج، چاند، ستارے، درخت، پہاڑ، جانور اور دریا وغیرہ جیسے ایسے عجائب وغرائب بیان کیے ہیں، جن سے ہر عقل مند انسان کے لیے یہ واضح ہوجاتا ہے کہ وہی (اللہ) اکیلا رب اور معبود ہے، اس کا کوئی شریک نہیں۔ اللہ تعالی کی نشانیوں میں غور وفکر کرنا جیسے اس کائنات کی ایک مستحکم وباریک نظام کے مطابق تخلیق اور اسے عدم سے وجود میں لانا یہ آفاق کی دلالت سے جانا جاتا ہے، اور یہ اللہ تعالی کی عظیم نشانیوں میں سے ایک نشانی ہے جو اللہ سبحانہ وتعالی کی ربوبیت اور اس کی وحدانیت پر دلالت کرتی ہے اور یہ کہ قرآن مجید اللہ تعالی کی جانب سے نازل شدہ برحق کتاب ہے۔
Indonesia Ufuk adalah bagian langit paling tinggi yang dapat dilihat mata, atau bagian langit paling jauh yang dapat terjangkau oleh penglihatan bersama permukaan bumi dari semua sisi: timur, barat, utara, dan selatan. Allah Ta'ālā telah menjelaskan sebagian dari ciptaan-ciptaan-Nya yang besar dan luar biasa di penjuru langit dan bumi, berupa matahari, bulan, bintang, pepohonan, gunung, binatang melata, laut, dan lain-lain yang akan menjelaskan kepada setiap orang yang berakal bahwa Dia adalah satu-satunya Rabb yang berhak disembah dan tiada sekutu bagi-Nya. Memperhatikan tanda-tanda kekuasaan Allah seperti penciptaan jagat raya menurut aturan yang sangat sempurna dan cermat termasuk yang dikenal sebagai dalālatul āfāq (petunjuk jagat raya), dan merupakan tanda di antara tanda-tanda kekuasaan Allah yang agung, yang menunjukkan rubūbiyyah dan pentauhidan-Nya Subḥānahu wa Ta’ālā, dan bahwa Alquran benar-benar berasal dari Allah Ta'ālā.
Bosanski "El-ufuk" je naudaljenija tačka do koje doseže pogled, ili je to najdalje što oko vidi od horizonta (gdje izgleda kao da se sastavljaju nebesa i Zemlja) na svim stranama: istočno, zapadno, sjeverno i južno. Allah je učinio jasnim i očitim neobičnosti i čuda Svog davanja i stvaranja na svim krajevima Zemlje i nebesa, što je dovoljno svakom pametnom i razumnom čovjeku da shvati da je Allah jedini Gospodar kojeg se obožava i Koji nema sudruga. Do spoznaje Allahovih dokaza, kao što je stvaranje kosmosa i njegov savršeni sistem, može se doći posmatranjem horizonta, i to je jedan od dokaza da je Allah jedini Stvoritelj i Gospodar svega, i da je Kur'an istina.
Русский Это самый дальний предел земли, видимый для глаза, горизонт, со всех сторон — с востока и запада, с севера и юга. Всевышний Аллах создал столько всего необычного и удивительного в пределах небес и земли: солнце, луну, звёзды, деревья, горы, животных, моря и многое другое. Благодаря этим знамениям каждому разумному человеку становится понятно, что всё это сотворено Господом, и только Он достоин поклонения, и у Него нет никаких сотоварищей. Это происходит, когда человек смотрит на знамения Аллаха, например, на то, как сотворена вселенная, как в ней всё гармонично и тонко устроено. Это называют ещё «далялят аль-афак». Это одно из великих знамений Аллаха, указывающих на Господство Всевышнего Аллаха и Его единственность, а также на то, что Коран — истина от Всевышнего Аллаха.

النواحي والأطراف، وأصل الكلمة يدل على تباعد ما بين أطراف الشيء واتساعه، والجمع: آفاق.

English "Ufuq" (pl. āfāq): sides, extremities. Original meaning: vastness of the distance between the boundaries of something.
اردو اُفُق: کنارے، اطراف۔ اس لفظ کا اصل معنی کسی چیز کے سِروں کے درمیان کا با ہم دور ہونا اوراس کا وسیع اور کشادہ ہونا ہے۔ اس کی جمع آفاقٌ ہے۔
Indonesia Sisi dan ujung. Asal makna kata tersebut menunjukkan jauh serta luasnya antar sisi sesuatu. Bentuk jamaknya adalah āfāq.
Bosanski "El-ufuk" su strane i ivice. Osnova ove riječi ukazuje na udaljenost između krajeva jedne stvari i na širinu među njima. Množina je "afak".
Русский Горизонт: Стороны, края. Изначально слово указывает на удалённость краёв чего-либо друг от друга и величину расстояния между ними. Множественное число — «афак».

يطلق مصطلح (الأفق) في باب: الإسراء والمعراج، عند الكلام على رؤية النبي صلى الله عليه وسلم لجبريل منهبطا من السماء، سادا عظم خلقه الأفق، ويراد به: ما انتهى إليه البصر من السماء مع وجه الأرض من جميع النواحي، أي: ما بين السماء إلى الأرض، ومن شرقه إلى غربه، ومن شماله إلى جنوبه. ويرد في باب: مقدار ما يدخل الجنة من هذه الأمة. ويطلق عند الكلام على الأفق المبين، ويراد به: الناحية التي من جهتها ترى الأشياء، أي: مطلع الشمس من قبل المشرق الذي يجيء منه النهار. ويطلق عند علماء الهيئة والفلك، ويراد به: الدائرة العظيمة التي تقطع بسيط الفلك الأعظم، فتفصل بين الظاهر منه فوق الأرض، والخفي منه عنها. ويطلق عند الصوفية عند كلامهم على الأفق الأعلى ومعناه عندهم: نهاية مقام الروح، وهي الحضرة الواحدية وحضرة الألوهية.

النواحي والأطراف، أي: ما ظهر من نواحي السماء وأطراف الأرض، يقال: أفق فلان: إذا ذهب في الأرض، وأفق البيت من بيوت الأعراب: نواحيه ما دون سمكه. وأصل الكلمة يدل على تباعد ما بين أطراف الشيء واتساعه، وقيل الأفق: خط دائري يرى فيه المشاهد السماء كأنها ملتقية بالأرض، ويبدو متعرجا على اليابس، ومكونا دائرة كاملة على الماء، ويطلق على مهب الرياح الأربعة: الجنوب، والشمال، والدبور، والصبا، ويقال في النسبة إليه: أفقي وأفقي، والجمع: آفاق.

أفق

جامع البيان (تفسير الطبري) : (24/259) - فتح القدير : (5/474) - كشاف اصطلاحات الفنون والعلوم : (1/239) - دستور العلماء : (1/100) - تهذيب اللغة : (9/258) - معجم مقاييس اللغة : (1/114) - المحكم والمحيط الأعظم : (6/478) - النهاية في غريب الحديث والأثر : (1/55) - الجنة والنار : (ص 206) - تاج العروس : (25/11) - المعجم الوسيط : (1/21) - التوقيف على مهمات التعاريف : (ص 57) - التعريفات : (ص 32) - معجم مقاليد العلوم في التعريفات والرسوم : (ص 140) - الكليات : (ص 154) - معجم ألفاظ العقيدة الإسلامية : (ص 68) - تيسير الكريم الرحمن في تفسير كلام المنان، السعدي : (6/591) - جهود الشيخ محمد الأمين الشنقيطي في تقرير عقيدة السلف : (ص 132) - منهج علماء الحديث والسنة في أصول الدين : (ص 30) - أصول الإيمان : (ص 12) - عقيدة أهل السنة والجماعة في الصحابة الكرام : (2/779) - عالم الملائكة الأبرار : (ص 11) -