حُدُودٌ

اردو حدود، شرعی طور پر واجب ہونے والی سزائیں۔
Indonesia Hudud

العُقُوباتُ الـمُقَدَّرَةُ شَرْعاً.

اردو شرعی طو پر مقرر کردہ سزائیں۔
Indonesia Hukuman/sanksi yang telah ditentukan oleh syariat.

الـحُدودُ: الأَشْياءُ التي حرَّمها الله تعالى ومَنَعَ مِن مُـخالَفَتِها، ومن إطلاقاتها وهو الأشهرُ: العُقوباتُ التي رَتَّبَها الشّارِعُ الحكِيم على ارتِكابِ بعضِ الفَواحِشِ والمُحَرَّماتِ، مِثْل: حَدّ الزّاني البِكر، وهو جَلْدُ مِائةٍ وتَغْرِيبُ عامٍ، وكَحَدِّ المُحْصَنِ إذا زَنَى، وهو الرَّجْمُ، وكَحَدِّ القاذِفِ، وهو ثَمانونَ جَلْدَةً، وكَحَدِّ السّارِقِ، وهو قَطْعُ يَمِينِهِ في رُبْعِ دِينارٍ فَصاعِداً، وسُمِّيَتْ هذه حُدوداً؛ لأنّها تَحُدّ، أي: تَمْنَعُ مِن إِتيان ما جُعِلَتْ عُقوباتٍ فيها.

اردو ’حدود‘ سے مراد وہ اشیاء ہیں جن کو اللہ تعالی نے حرام قرار دیا ہے جن کی مخافت کرنا جائز نہیں۔ حدود کا اطلاق کئی معنوں پر ہوتا اس کا مشہور اطلاق ان سزائیں پر ہوتا ہے جنہیں شارع (اللہ تعالی) نے بعض برے اور حرام کاموں پر لاگو کیا ہے۔ جیسے غیر شادی شدہ شخص کے زنا کی حد جو سو کوڑوں اور ایک سال کی دربدری ہے، شادی شدہ شخص کے زنا کی حد رجم ہے، بہتان تراشی کی حد جو کہ اسّی کوڑوں پر مشتمل ہے، چوری کی حد جو کہ ربع دینار اور اس سے زیادہ چوری کرنے پر ہاتھ کاٹنے پر مبنی ہے۔ ان سزاؤں کا نام حدود رکھا گیا ہے اس لیے کہ یہ ان قابلِ سزا جرائم کو انجام دینے سے روکتی ہیں۔
Indonesia Hudud ialah segala sesuatu yang diharamkan oleh Allah -Ta'ālā- dan dilarang melanggarnya. Di antara bentuk pemakaiannya dan ini yang paling terkenal yaitu hukuman-hukuman yang ditetapkan oleh Allah Yang Mahabijaksana karena melakukan hal-hal keji dan haram. Seperti had pezina yang masih lajang, yaitu didera seratus kali dan diasingkan setahun; hudud pezina muḥṣan (orang yang sudah menikah) apabila melakukan zina, yaitu dirajam; had qażaf (orang yang menuduh orang lain berzina), yaitu didera delapan puluh kali; dan had pencuri, yaitu dipotong tangan kanannya bila mencuri seperempat dinar atau lebih. Hukuman-hukuman tersebut dinamakan ḥudūd karena ia mencegah pelakunya untuk melakukan sesuatu yang mengandung hukuman.

جَمْعُ حَدٍّ، وهو: الحاجِزُ بين الشَّيئَيْنِ، وحدُّ الشَّيءِ: مُنتَهاهُ، ويأتي بمعنى: الـمَنْع، ومنه سُمِّيَتُ عُقوبَةُ الزِّنا وغَيْرِهِ حَدّاً؛ لأنّها تَـمْنَعُ مِن مُعاوَدَتِهِ.

اردو حدود یہ حَدٌّ کی جمع ہے۔ دو چیزوں کے درمیان پائی جانے والی رکاوٹ۔ کسی چیز کی حد سے مراد اس کی انتہا اور آخری سرا ہے۔ یہ منع کرنے کے معنی میں بھی آتا ہے، اسی لیے زنا وغیرہ کی سزاؤں کا نام حد رکھا گیا ہے کیوں کہ یہ سزائیں انسان کو اُن جرائم کے ارتکاب سے روکتی ہیں۔
Indonesia Bentuk jamak dari kata ḥad, yaitu penghalang antara dua benda. “Ḥaddu asy-syai`” artinya bagian ujung sesuatu. Juga mengandung makna mencegah. Di antaranya, hukuman zina dan sebagainya dinamakan ḥad (baca: hudud) karena hukuman-hukuman tersebut mencegah pelaku untuk mengulanginya.

يَرِدُ مُصْطلَح (حُدود) في مَواضِعَ عدِيدًة من الفقه، منها: كتاب الصَّلاة، باب: صَلاة الجُمُعَةِ، وكِتاب الوَكالَة، باب: الوَكالَة في حُقوقِ اللهِ، وكتاب المَوارِيث، باب: مَوانِع الإِرْثِ، وكِتاب القَضاء، باب: شُروط الشَّهادَة، وغَيْرذلك. ويُطْلَقُ في كِتابِ الشُّفْعَةِ، باب: شُروط الشُفْعَةِ، ومعناها: العَلامات التي تَفْصِلُ بين الأمْلاكِ. وتُطلَقُ ويُراد بها: الحُدود التي حَدَّها لِلنّاسِ في مَطاعِمِهِم ومَشارِبِهِم ومَناكِحِهِمْ وغَيْرِها، مِمّا أَحلَّ، وحَرَّمَ، وأَمر بِالِانْتِهاءِ عمّا نَهَى عَنْهُ مِنْها.

جَمْعُ حَدٍّ، وهو: الحاجِزُ بين الشَّيئَيْنِ، وحدُّ الشَّيءِ: مُنتَهاهُ، ويأتي بمعنى: الـمَنْع، ومنْهُ سُمِّيَ البَوّابُ حَدّاداً؛ لِأنّه يَـمْنَعُ غَيْرَهُ مِن الدُّخولِ، وسُمِّيَتُ عُقوبَةُ الزِّنا وغَيْرِهِ حَدّاً؛ لأنّها تَمْنَعُ مِن مُعاوَدَتِهِ؛ ويَمْنَعُ أيضاً غَيْرَهُ عن إِتيان الجِناياتِ.

حدد

البناية شرح الهداية : (6/256) - مطالب أولي النهى : (6/158) - الـمغني لابن قدامة : (5/229) - التعريفات للجرجاني : (ص 83) - تحرير ألفاظ التنبيه : (ص 323) - معجم مقاليد العلوم في الحدود والرسوم : (ص 66) - العين : (3/9) - معجم مقاييس اللغة : (2/3) - تهذيب اللغة : (3/370) - المحكم والمحيط الأعظم : (2/504) - مختار الصحاح : ( ص68) - لسان العرب : (3/140) - المصباح المنير في غريب الشرح الكبير : (1/125) - التوقيف على مهمات التعاريف : (ص 137) - معجم لغة الفقهاء : (ص 76) -