مرجئة

English The Murji'ites
Français Al-murji'ah
Español Murjiah.
اردو فرقہ مرجئہ
Indonesia Sekte Murjiah
Русский Мурджииты

وصف أطلق على كل من أخر العمل عن الإيمان ولم يدخله في مسماه.

English A description that is used for anyone who isolates actions from faith and does not include actions to be part of faith
Français Cet attribut est utilisé pour définir tous ceux qui excluent les œuvres de la définition de la foi.
Español Descripción que se aplica a todo aquel que separa la acción de la fe, y que no circunscribe a la fe dentro de su correcta denominación (ya que está relacionada con la acción). (2)
اردو ایک صفت جس کا اطلاق ہر اس شخص پر ہوتا ہے جو عمل کو ایمان سے مؤخر (الگ) کرتا ہے اور اسے ایمان کے مسمی میں داخل نہیں کرتا۔
Indonesia Gelar yang diberikan kepada setiap orang yang mengeluarkan amal dari iman dan tidak memasukkannya ke dalam pengertiannya.
Русский Название, которое употребляется в отношении каждого, кто откладывает деяния на потом после веры и не включает деяния в определение веры.

المرجئة فرقة من فرق الإسلام يعتقدون أنه لا يضر مع الإيمان معصية كما أنه لا ينفع مع الكفر طاعة، وأن العمل خارج عن مسمى الإيمان، وسموا مرجئة لأمرين: أحدهما: تأخيرهم العمل عن النية والقصد. وثانيهما: إعطاؤهم المؤمن العاصي الرجاء في عفو الله تعالى. واختلفوا في تفسير مفهوم الإيمان بحسب فرقهم: 1 - الجهمية: أتباع الجهم بن صفوان الذي كان يزعم أن الإيمان هو معرفة القلب، وأنه لا يتبعض ولا يتفاضل فيه أهله. 2 - الأشاعرة والماتريدية الذين قالوا إن الإيمان هو التصديق القلبي، ومنهم من قال: إنه لا يزيد ولا ينقص كالباقلاني والجويني والرازي، وعليه أكثر الماتريدية، ومنهم من قال: إن التصديق القلبي يقبل الزيادة والنقصان من حيث القوة والضعف لوضوح الأدلة والبراهين عليه، وقال بهذا الإيجي والغزالي. 3 - أبو حنيفة وأصحابه: قالوا الإيمان: هو الإقرار باللسان والتصديق بالجنان، وهو لا يزيد ولا ينقص، ووافقهم في هذا بعض الماتريدية. 4 - الكرامية: قالوا: إن الإيمان هو الإقرار باللسان دون القلب. ويجمع المرجئة القول بإخراج الأعمال من مفهوم الإيمان ثم إن المرجئة فيما يتعلق بمسألة وجوب العمل على فريقين: 1 - غلاة المرجئة: وهم الذين يزعمون أن العمل غير واجب، ويدعون أن المؤمن مهما ارتكب من المعاصي أو أخل بالواجبات فالنجاة متحققة له، ويقولون: إنه لا يضر مع الإيمان ذنب كما لا ينفع مع الكفر طاعة. 2 - غير الغلاة من المرجئة: وهم يرون أن العمل واجب، وأن العاصي تحت المشيئة يوم القيامة، فإن شاء الله عذبه وإن شاء غفر له، وهذا القول منهم خفف الخلاف بينهم وبين أهل السنة وجعل الخلاف في مسمى الإيمان فقط.

English "Al-Murji’ah" (the Murji'ites), in general, have isolated actions from faith, and they are given this name for two reasons: 1. Postponing or isolating actions from one’s intention and purpose. 2. Granting the sinning believer hope that Allah will pardon and forgive them. They have defined faith in many ways: 1. "Al-Jahmiyyah" (the Jahmites): They are the followers of Al-Jahm ibn Safwān, who claimed that faith is about awareness of the heart. Faith, according to them, is not divisible, and all people have the same level of faith. 2. "Al-Asha‘irah" (the Ash‘arites) and "Al-Mātureediyyah": They say that faith is belief in the heart. A group of them, such as Al-Baqillāni, Al-Juwayni, Ar-Rāzi, and the majority of "Al-Mātureediyyah", say that faith neither increases nor decreases. Another group, such as Al-Eeji and Al-Ghazāli, say that belief in the heart is subject to increase and decrease when it becomes strong and weak, because of the clarity of evidence and proofs. 3. Abu Hanifah and his companions: They said that faith involves acknowledgement by the tongue and belief by the heart, and it neither increases nor decreases. Some of Al-Mātureediyyah adopted this opinion. 4. "Al-Karrāmiyyah" said that faith is acknowledgement by the tongue without affirmation of the heart. These are the most popular views regarding faith and its increase and decrease. "Al-Murji’ah", however, have two different opinions on the obligation of actions: 1. The extremist "Murji’ah": They say that actions are not obligatory, claiming that salvation is guaranteed for the believer no matter what sins he commits or obligations he neglects. They also say that sins do not harm one as long as he has faith, exactly as obedience does not benefit one as long as he is upon disbelief. 2. The non-extremist "Murji’ah": They view that actions are obligatory and that the sinner shall be under Allah’s Will on the Day of Resurrection, either to punish or forgive him. Such a statement reduced disagreement between this group and Ahl-us-Sunnah and limited it to the definition of faith only.
Français Tous les Murji'ah ont exclu les œuvres de la définition de la foi. Ils ont été nommés ainsi pour deux raisons : la première : ils ont dissocié l'œuvre de l'intention et de l'objectif. Deuxièmement : ils ont donné au croyant pécheur l'espoir de l'absolurtion d'Allah- le Très-Haut. Ils ont plusieurs définitions de la foi, son augmentation et sa diminution. Les plus répandues sont : 1- les Jahmiyyah : ceux qui ont suivi Al-jahm ibn Ṣafwân qui prétendait que la foi est la reconnaissance du cœur, qu'elle ne se divise pas et que tous les croyants ont la même foi. 2- Al-ashâ'irah et Al-mâturîdiyyah ont dit : la foi est la reconnaissance du cœur. Certains comme Al-bâqilânî, Al-juwaynî, Arrâzî et la plupart de Al-mâturîdiyyah ont dit : la foi n'augmente pas et ne diminue pas. D'autres par contre, comme Al-îjî et Al-ghazâlî ont dit : la reconnaissance du cœur peut augmenter et diminuer du point de vue de la force et la vigueur, car les preuves à ce sujet sont nombreuses et claires. 3- Abu Hanîfah et ses partisans ont dit : la foi est l'acceptation par la langue et la confirmation par les membres. Elle n'augmente pas et ne diminue pas. Al-mâturîdiyyah les ont rejoint sur cette définition. 4- Al-karâmiyyah ont dit : la foi est la reconnaissance par la langue et non par le cœur. Al-murji'ah se sont scindés en deux au sujet de l'obligation des œuvres : 1- Al-murji'ah extrémistes : prétendent que les œuvres ne sont pas obligatoires et quand bien même le croyant commettrait des péchés ou délaisserait des obligations il sera sauvé de l'enfer. Ils disent : aucun péché n'est grave tant qu'il y a la foi et aucune œuvre n'est bénéfique tant qu'il y a la mécréance. 2- Al-murji'ah modérés : les actes sont obligatoires et le pécheur est sous la Volonté d'Allah le jour du jugement. Allah peut lui pardonner comme Il peut le punir. Cet avis a réduit leur divergence avec les gens de la sunnah. Il reste néanmoins la divergence sur la définition de la foi.
Español Murjiah son los que generalmente no relacionan la acción con la fe, y han sido denominados como tal debido a dos razones: La primera de ellas es no relacionar la acción con la intención y el propósito. Segunda: Darle al creyente desobediente esperanza en el perdón de Al-lah, Exaltado sea. Sostiene sobre la fe varias afirmaciones: 1. Al-Jahmia: Seguidores de Al-Jahmu bin Safuan, quien sostenía que la fe es el conocer del corazón, y que no hay preferencia entre las personas en ese conocer. 2. Al-Ash’aria y Al-Maturidia: Afirman que la fe es creencia en el corazón, y algunos sostuvieron que la fe no aumenta ni disminuye, como es el caso de Al-Baqillani, Al-Juwayni, Al-Razi, y esa es la visión de la mayoría de los seguidores de Al-Maturidi. Otros por su parte afirman que la fe es una creencia en el corazón, que acepta el aumento y la reducción, en cuanto a la fuerza, debilidad, claridad, pruebas y evidencias sobre esa fe, y esta visión es la de Al-Igui y Al-Ghazali. 3. Abu Hanifa y sus compañeros: Afirmaron que la fe implica el testimonio de la lengua y la creencia en corazón, y que no aumenta ni se reduce, y algunos seguidores de Al-Maturidi comparten esa visión. 4. Al-Karamiya: Afirman que la fe es la admisión con la lengua, antes que con el corazón. Estas son por tanto las afirmaciones más conocidas en cuanto al aumento o la reducción de la fe. En cuanto a la obligatoriedad de la acción (al-‘amal), Al-Murjiah se divide en dos grupos: 1. Los más ortodoxos, que sostienen que la acción no es de obligado cumplimiento, y afirman que el creyente por muchos pecados que haya cometido o que haya incumplido las obligaciones, la salvación le está asegurada. Además aseguran que con la fe, el delito o la falta no perjudican al creyente, y tampoco la obediencia aporta beneficio alguno con la incredulidad. 2. Los que no son ortodoxos de Al-Murjiah: Afirman que al-‘amal (acción) es de obligado cumplimiento, y que el desobediente está bajo la voluntad de Al-lah el Día de la Resurrección (yaum al-Qiyama), que si Al-lah quiere le perdonará, y que si Al-lah quiere le castigará. Y esta afirmación ha suavizado la controversia mantenida con ellos por parte de Ahlu Al-Sunnah, y por tanto la disputa entre ambos ahora solo se circunscribe en cuanto a la denominación de la fe (al-iman). (3).
اردو ’مرجئہ‘ اسلام کے فرقوں میں سے ایک فرقہ ہے جس کا یہ عقیدہ ہے کہ ایمان کے ہوتے ہوئے معصیت اور نافرمانی کوئی نقصان نہیں پہنچا سکتی، جس طرح کفر کے ساتھ طاعت وفرماں برداری فائدہ نہیں دیتی، اور یہ کہ عمل ایمان کے مسمی سے خارج ہے۔ انہیں دو وجوہات کی وجہ سے ’مرجئہ‘ کا نام دیا گیا: پہلی وجہ: یہ عمل کو نیت اور ارادے سے مؤخر (جدا) جانتے ہیں۔ دوسری وجہ: یہ گناہگار مومن کو اللہ کی بخشش کی امید دلاتے ہیں۔ ایمان کی تعریف کے سلسلے میں ان کے متعدد اقوال ہیں جو یہ ہیں: 1۔مر جئہ جہمیہ: يہ جہم بن صفوان کے پیروکار ہیں جس کا خیال تھا کہ ایمان دل کی معرفت کا نام ہے اور یہ کہ نہ تو ایمان کے اجزاء ہوتے ہیں اور نہ ہی اہلِ ایمان اس میں ایک دوسرے پر کوئی فضیلت رکھتے ہیں۔ 2۔ مرجئہ اشاعرہ و ماتریدیہ: ان کے بقول ایمان تصدیق قلب کا نام ہے۔ ان میں سے کچھ کا کہنا یہ تھا کہ ایمان کم یا زیادہ نہیں ہوتا جیسے باقلانی، جوینی اور رازی کا کہنا تھا، اکثر ماتریدیہ کا یہی مذہب ہے۔ کچھ یہ کہتے کہ تصدیق قلبی میں دلائل و براہین کے واضح ہونے کی وجہ سے مضبوطی اور کمزوری کے اعتبار سے کمی بیشی ہوتی ہے۔ امام غزالی اور الایجی اسی کے قائل تھے۔ 3۔ مرجئہ حنفیہ: یہ ابوحنیفہ اور ان کے پیرو ہیں؛ ان کا کہنا تھا کہ ایمان زبان سے اقرار کرنے اور دل سے تصدیق کرنے کا نام ہے اور اس میں کمی بیشی نہیں ہوتی۔ بعض ماتریدی حضرات اس قول میں ان کی موافقت کرتے ہیں۔ 4۔ مرجئہ کرامیہ: ان کے بقول ایمان صرف زبان سے اقرار کرلینے کا نام ہے اور اس میں دل کا کوئی حصہ نہیں۔ ایمان کے بڑھنے یا کم ہونے کے سلسلے میں یہ مرجئہ کے مشہور اقوال ہیں۔ عمل کے واجب ہونے کے مسئلے میں مرجئہ کے دو گروہ ہیں: 1۔ غالی مرجئہ: ان کا عقیدہ یہ ہے کہ عمل واجب نہیں ہے۔ ان کا دعویٰ ہے کہ مومن جتنے بھی گناہ کر لے یا پھر واجبات کی ادائیگی میں جتنی بھی کوتاہی کرے وہ ہر صورت میں نجات پائے گا۔ ان کا کہنا ہے کہ: ایمان کے ہوتے ہوئے گناہ کچھ نقصان نہیں دیتا جیسے کفر کے ہوتے ہوئے کوئی نیکی فائدہ بخش نہیں ہوتی۔ 2۔ مرجئہ جو غالی نہیں ہیں: ان کا خیال یہ ہے کہ عمل واجب ہے اور گناہ گار روزِ قیامت اللہ کی مشیت کے تحت ہوگا۔ اگر اللہ چاہے گا تو اسے عذاب دے گا اور اگر چاہے گا تو اسے بخش دے گا۔ اس بات کی وجہ سے ان کے اور اہل سنت کے مابین اختلاف کم ہوجاتا ہے اور صرف ایمان کے مسمی میں اختلاف باقی رہ جاتا ہے۔
Indonesia Al-Murji`ah adalah salah satu sekte dalam Islam yang meyakini bahwa maksiat tidak membahayakan selagi ada keimanan, sebagaimana ketaatan tidak bermanfaat selagi ada kekufuran, dan bahwa amal keluar dari substansi iman. Mereka dinamakan Murjiah karena dua hal. Pertama: Mereka mengakhirkan amal dari niat dan tujuan. Kedua: Mereka memberikan harapan ampunan Allah -Ta'ālā- kepada orang mukmin yang durhaka. Mereka berbeda pendapat dalam menafsirkan pengertian iman sesuai dengan sekte-sekte yang ada: 1. Jahmiyyah, yakni para pengikut Jahm bin Ṣafwan yang menganggap bahwa iman adalah pengetahuan hati, iman tidak terbagi-bagi dan orang-orang yang menyandangnya tidak memiliki perbedaan di dalamnya. 2. Asyā'irah dan Maturidiyah. Mereka mengatakan bahwa iman adalah pembenaran dengan hati. Di antara mereka ada yang mengatakan, iman tidak bertambah dan tidak berkurang sebagaimana menurut Al-Bāqillāni, Al-Juwaini, dan Ar-Rāzi. Pendapat ini dipegang mayoritas Maturidiyah. Dan di antara mereka ada yang berpendapat bahwa pengakuan dengan hati dapat bertambah dan berkurang dari segi kekuatan dan kelemahan karena tingkat kejelasan dalil dan bukti. Orang yang berpendapat demikian adalah Al-Īji dan Al-Gazali. 3. Abu Hanifah dan para pengikutnya. Mereka mengatakan, iman adalah pengakuan dengan lisan dan pembenaran dengan hati. Iman tidak bertambah dan tidak berkurang. Pendapat ini disepakati oleh sebagian Maturidiyah. 4. Kurramiyyah. Mereka mengatakan bahwa iman adalah pengakuan dengan ucapan lidah tanpa hati. Orang-orang Murjiah sepakat mengeluarkan amalan dan pengertian iman. Selanjutnya berkaitan dengan masalah kewajiban amal, Murjiah terbagi dua kelompok. 1. Kelompok Murjiah Ekstrim. Mereka adalah orang-orang yang mengklaim bahwa amal tidak wajib. Mereka juga mengklaim bahwa seorang mukmin meskipun melakukan kemaksiatan atau melanggar kewajiban, ia pasti mendapatkan keselamatan. Mereka mengatakan bahwa dosa tidak akan membahayakan iman, sebagaimana ketaatan tidak ada gunanya bersama kekafiran. 2. Kelompok Murjiah non Ekstrim. Mereka memandang amal itu wajib dan orang yang durhaka ada dalam kehendak Allah pada hari kiamat. Jika Allah berkehendak, Dia mengazabnya dan jika berkehendak, Dia mengampuninya. Pendapat mereka ini meminimalisir perselisihan antara mereka dengan Ahlisunah, dan melokalisir perselisihan hanya dalam pengertian iman saja.

من الإرجاء، وهو التأخير والتأجيل، يقال: أرجأت الأمر، أرجئه، إرجاء: إذا أخرته وأجلته. ويأتي بمعنى إعطاء الرجاء، وهو: الأمل.

English "Murji’ah": derived from "irjā’", which means to delay or postpone something. It could also refer to hope and fear.
Français Al-murji'ah: vient du terme " Irjâ' " qui signifie l'ajournement. On dit : " l'affaire a été ajournée", c'est-à-dire qu'elle a été retardée. On utilise ce terme pour évoquer l'espoir et la peur.
Español Murjiah: Deriva del término al-irjah, es decir, aplazar. También tiene el significado de esperanza, temor, miedo.
اردو مرجئہ: یہ ’ارجاء‘سے ماخوذ ہے جس کا معنی ہے: ’مؤخرکرنا‘۔ کہا جاتا ہے: ’’أَرْجَأتُ الأمْرَ، وأَرْجَيْتَهُ‘‘ یعنی ’میں نے کام کو مؤخر کردیا‘۔یہ امید دلانے کے معنی میں بھی آتا ہے۔
Indonesia Al-Murji`ah berasal dari kata al-irjā`, yaitu menunda dan menangguhkan. Dikatakan, "Arja`tu al-amra urji`uhu irjā`an", artinya aku menangguhkan urusan itu dan menundanya. Al-Irjā` juga bisa bermakna memberikan ar-rajā`, yakni harapan.
Русский аль-мурджиа (мурджииты) происходит от аль-иржаа - "откладывать на потом". Фраза аржа‘ту -ламра и аржайтах означает "Я отложил на потом такое-то дело". Употребляется в нескольких значениях, в числе которых "надежда" и "страх".

يرد مصطلح (المرجئة) في العقيدة في باب: توحيد الألوهية، وباب: توحيد الأسماء والصفات، وباب: الفرق والمذاهب. ويطلق مصطلح (إرجاء)، ويراد به: تأخير صاحب الكبيرة إلى يوم القيامة، فلا يحكم عليه بكفر ولا إيمان. وقد يطلق في العقيدة، باب: الإمامة الكبرى، ويراد به: التوقف في المفاضلة بين علي وعثمان رضي الله عنهما وتفويض أمرهما إلى الله تعالى. ويطلق أيضا ويراد به: تأخير علي رضي الله عنه إلى الدرجة الرابعة بعد أبي بكر وعمر وعثمان رضي الله عنهم.

من الإرجاء، وهو التأخير والتأجيل، يقال: أرجأت الأمر، أرجئه، إرجاء: إذا أخرته وأجلته. ويأتي بمعنى إعطاء الرجاء، وهو: الأمل. ويطلق على عدة معاني منها: الإمهال.

رجأ

العين : (6/174) - تهذيب اللغة : (11/181) - الصحاح : (6/2352) - الفرق بين الفرق : (ص 190) - وسطية أهل السنة بين الفرق (رسالة دكتوراة) : (ص 294) - أصول مسائل العقيدة عند السلف وعند المبتدعة : (1/54) - الملل والنحل : (1/88) - الاقتصاد في الاعتقاد : (ص 141) - فرق معاصرة تنتسب إلى الإسلام وبيان موقف الإسلام منها : (3/1071) - الإيمان بين السلف والمتكلمين : (ص 85) - زيادة الإيمان ونقصانه وحكم الاستثناء فيه : (ص 26) - مقالات الإسلامين : (1/214) - التمهيد : (ص 388) - الإرشاد : (ص 335) - أصول الدين عند الإمام أبي حنيفة : (ص 354) -