View Translations English Urdu Indonesian

اسْتِئْناسٌ

English Cordial entrance
اردو استئناس، مانوس ہونا
Indonesia Berlemah-lembut, Minta izin masuk

التَّلَطُّفُ عند الدُّخولِ بِصِفَةٍ تَحْصُلُ مَعَها الطُّمَأنِينَةُ والأَمْنُ وَالسُّرورُ.

English Entering in a gentle way that brings reassurance, safety, and delight.
اردو کسی کے گھر میں نرم خوئی کے ساتھ اس طرح داخل ہونا کہ اہلِ خانہ کو اطمینان، سلامتی اور خوشی کا احساس ہو۔
Indonesia Bersikap ramah saat masuk (rumah) diiringi dengan ketenangan, rasa aman, dan kegembiraan.

الاسْتِئْنَاسُ أَدَبٌ رَفِيعٌ مِن الآدابِ الشَرْعِيَّةِ التي أَدَّبَ الله بِها عِبادَهُ المُؤْمِنِينَ في مُعاشَرَتِهِم لِبَعْضِهِم البَعْضَ، ومعناهُ: طَلَبُ الأُنْسِ وإِزالَةُ الوَحْشَةِ عند إِرادَةِ الدُّخولِ على أَحَدٍ من النّاسِ في بَيْتِهِ، وذلك لا يَتَحَقَّقُ بِمُجَرَّدِ الإِذْنِ؛ بل لا بُدَّ لِتَحَقُّقِهِ مِن التَّرَفُّقِ والاسْتِعْلامِ، واخْتِيارِ الوَقْتِ اللاَّئِقِ وغَيْرِ ذلك مِمّا يُزِيلُ الوَحْشَةَ، ويُذْهِبُ الأَذى عن صاحِبِ البَيْتِ، كأنْ يُصْدِرَ صَوْتاً، كالنَّحْنَحَةِ ونحوِ ذلك؛ لِئَلَّا يُخِيفَ أَهْلَ البَيْتِ، أو يُصادِفَ حالَةً يَكْرَهونَ أنْ يَطَّلِعَ عليها النّاسُ.

English "Isti’nās" (cordial entrance) is from the fine manners of the Shariah with which Allah has refined the manners of His believing slaves in their life together. It means seeking intimacy and removing forlornness when wishing to enter someone's home. It is not achieved by a mere permission to enter; rather it is achieved by leniency; enquiry; choosing a proper time in addition to whatever removes forlornness and solitude away from the house owner, like making a sound and the like upon entering, so as not to frighten the people therein or see them in a condition that they dislike to be seen by others.
اردو استئناس (کسی کے گھر میں داخل ہونے سے پہلے) اجازت لینا شرعی آداب میں سے ایک ادب ہے جس کی تعلیم اللہ تعالیٰ نے اپنے مومن بندوں کو دی ہے۔ اس کا معنی ہے کہ جب کوئی شخص کسی کے گھر میں جانے کا ارادہ کرے تو مانوسیت پیدا کی جائے اور وحشت کو دور کیا جائے۔ یہ چیز محض اجازت لینے سے حاصل نہیں ہوتی بلکہ اس کے لیے الفت پیدا کرنے کی ضرورت ہے، مثال کے طور پر کچھ ایسا کرے کہ اہلِ خانہ اس کی آمد سے آگاہ ہوجائیں، جیسے کوئی آواز نکالے، کھانس کھکھار کر یا کسی اور طریقے سے، تاکہ اہلِ خانہ اچانک ڈر نہ جائیں یا انھیں ایسی حالت میں نہ دیکھ لے جس میں دوسروں کا انھیں دیکھنا پسند نہ ہو۔
Indonesia Al-Isti`nās merupakan salah satu adab syar'i yang mulia, di mana Allah menjadikannya untuk mendidik hamba-hamba-Nya yang beriman dalam pergaulan mereka satu dengan yang lainnya. Maknanya: mencari keakraban dan melenyapkan kesepian ketika hendak menemui seseorang di rumahnya. Hal itu tidak hanya terwujud dengan sekadar izin, tapi untuk merealisasikannya harus ada keramahan, pemberitahuan, memilih waktu yang sesuai, dan sebagainya yang dapat menghilangkan kesepian dan tidak mengganggu pemilik rumah. Contohnya mengeluarkan suara seperti berdehem dan sebagainya agar tidak menakut-nakuti penghuni rumah atau secara tiba-tiba menjumpai mereka dalam kondisi yang tidak mereka sukai bila orang-orang melihatnya.

الاسْتِئْناسُ: الاطْمِئْنانُ إلى الشَّيْءِ والثِّقَةُ بِهِ، ويأْتي بِمعنى الاِسْتِئْذان، والتَّلَطُّف في الطَّلَبِ، وأصْلُه مِن الأُنْسِ، وهو: السُّكونُ.

English "Isti’nās": feeling at ease about something and trusting it. Derived from "uns", which means serenity and calmness. Other meanings: gently asking for permission
اردو استئناس: کسی شے پر مطمئن ہوجانا اور اس کے متعلق یقین ہو جانا یہ استئذان یعنی اجازت طلب کرنے اور نرمی کے ساتھ طلب کرنے کے معنی میں بھی آتا ہے۔ استئناسْ کی اصل اُنس ہے ۔ جس کا معنی ہے سکون۔
Indonesia Al-Isti`nās artinya tenteram kepada sesuatu dan percaya kepadanya. Juga bermakna minta izin dan berlemah-lembut dalam meminta. Asal kata al-Isti`nās ialah "al-unsu", artinya diam/tenang.

يَرِد مُصْطلَح (اسْتِئْناس) في كتاب الأَطْعِمَةِ، باب: آداب الأَكْلِ. ويُطلَق في كتابِ الحَجِّ، باب: جَزاء الصَّيْدِ، وكتاب الصَّيْدِ والذَّبائِحِ، باب: صِفَة الذَّكاةِ، ويراد به: زَوالُ التَّوَحُّشِ من الحَيَوانِ. ويُطلَقُ في باب: آداب العِلْمِ، وباب: حُسْن المُعاشَرَةِ وغَيْرها، ومعناه: إِزالَةُ الوَحْشَةِ عن النَّفْسِ وتَرْوِيحُها.

الاسْتِئْناسُ: الاطْمِئْنانُ إلى الشَّيْءِ والثِّقَةُ بِهِ، يُقال: اسْتَأْنَسَ، يَسْتَأْنِسُ: إذا اطْمَأَنَّ. ويأْتي بِمعنى: التَّلَطُّفِ في الطَّلَبِ، وأصْلُه مِن الأُنْسِ، وهو: السُّكونُ، يُقال: أَنِسَ، يَأْنِسَ، أُنْساً، أيْ: سَكَنَ. وضِدُّه: الاسْتِيحاشُ، يُقال: اسْتَأْنَسَ الحَيَوانُ: إذا ذَهَبَ تَوَحُّشُهُ. ومِن مَعانِيه أيضاً: النَّظَرُ والاسْتِعلامُ والاِسْتِئْذانُ والاِسْتِخْبارُ.

أنس

نهاية المحتاج إلى شرح المنهاج : (8/117) - إحياء علوم الدين : (2/228) - معجم مقاييس اللغة : (1/145) - لسان العرب : (1/233) - تاج العروس : (5/414) - غذاء الألباب : (1/308) - الموسوعة الفقهية الكويتية : (3/162) - معجم لغة الفقهاء : (ص 57) - القاموس الفقهي : (ص 28) -